رسائی کے لنکس

ویت نام: چین کے خلاف مظاہرہ، 22 افراد گرفتار

  • واشنگٹن

ویت نام میں چین کے خلاف مظاہرہ(فائل)

ویت نام میں چین کے خلاف مظاہرہ(فائل)

چین اور ویت نام کے درمیان جنوبی بحیرہ چین میں واقع دو غیر آباد جزائر پارسل اور سپراٹلی پر اختلافات ہیں، جن کے بارے میں خیال ہے کہ وہ تیل اور گیس کے ذخائر سے مالا مال ہیں۔

جنوبی بحیرہ چین کے پانیوں اور علاقائی حدود کے تنازع میں دیگر کئی ممالک کے ساتھ ویت نام بھی شامل ہے جہاں اتوار کے روز چین کے خلاف مظاہرے کے دوران پولیس نے 22 افراد کو گرفتار کرلیا۔

ویت نام کے دارالحکومت ہنوئی میں تقریباً دوسو افراد کے ایک گروپ نے ہنوئی اوپرا ہاؤس کے باہر اکھٹے ہونے کےبعد چین کے خلاف مظاہرہ شروع کیا۔ انہوں نے کئی بینر اٹھائے ہوئےتھے جن پرلکھا تھا کہ پارسل اور سپراٹلی جزائر ویت نام کی ملکیت ہیں اور چین معصوم ویت نامی ماہی گیروں کو ہلاک کرنا بند کرے۔

مظاہرین نے جلوس کی شکل میں شہر کے مرکزی حصے سے ہوتے ہوئے چین کے سفارت خانے تک جانے کی کوشش کی، جہاں پولیس نے انہیں روک لیا۔

پولیس 22 مظاہرین کو پکڑ نے کے بعد ایک بس میں بٹھا کر انہیں اپنے ساتھ لے گئی۔

ایک گرفتار شخص نے بتایا کہ پولیس انہیں لوک ہا جیل لے جارہی ہے۔

اس مظاہرے کی تصویر جلد ہی انٹرنیٹ اور سوشل میڈیا پر جاری کردی گئیں۔

اسی طرح کا ایک اور مظاہرہ چی منہ شہر میں بھی ہوا لیکن وہاں کسی شخص کو گرفتار نہیں کیا گیا۔ ہنوئی میں ایک 47 سالہ خاتون بوئی تھی منہ ہانگ نے کہا کہ پولیس کو یہ حق حاصل نہیں ہے کہ وہ احتجاج کرنے والوں کو گرفتا رکرے۔

ان کا کہناتھا کہ لوگوں نے وطن سے اپنی محبت کے اظہار کے لیے جلوس نکالا تھا۔

گذشتہ ہفتے ویت نام کی سرکاری آئل اینڈ گیس کمپنی ’ پیٹرو ویت نام‘ نے چین پرالزام لگایاتھا کہ اس کی کشتیوں نے ویت نام کی سمندری حدود میں زلزلوں کے سروے کرنے والے بحری جہاز کی تاریں کاٹ دی تھیں۔ کمپنی نے گذشتہ سال بھی چین پردوبار اسی طرح کا الزام عائد کیاتھا۔

چین اور ویت نام کے درمیان جنوبی بحیرہ چین میں واقع دو غیر آباد جزائر پارسل اور سپراٹلی پر اختلافات ہیں ۔ جن کے بارے میں خیال ہے کہ وہ تیل اور گیس کے ذخائر سے مالا مال ہیں۔

جنوبی بحیرہ چین کی سمندری حدود اور اس کے جزائر کی ملکیت پر ویت نام، ملائیشیا، فلپائن ، برونائی اور تائیوان کے ساتھ چین کے ساتھ تنازعات موجودہیں۔
XS
SM
MD
LG