رسائی کے لنکس

افغان قانون ساز کی خاتون فلمساز کو 'جنسی ہراس' کی دھمکی


انٹرویو کا ایک منظر (ازابیل افغان قانون ساز سے سوال کر رہی ہیں)

انٹرویو کا ایک منظر (ازابیل افغان قانون ساز سے سوال کر رہی ہیں)

ازابیل نے حنفی سے مستعفی ہونے کا مطالبہ کرتے ہوئے اپنے تجربے کے بارے میں کہا کہ "یہ بہت سے افغان عورتوں کو روز مرہ درپیش تضحیک کا بہت ہی بہت ہی چھوٹا سا نمونہ ہے۔"

افغانستان کے ایک قانون ساز نے ایک خاتون دستاویزی فلم ساز کو انٹرویو کے دوران جنسی طور پر ہراساں کرنے کی دھمکی دی ہے۔

افغان رکن پارلیمنٹ نذیر احمد حنفی اور فلم ساز ازابیل ینگ کے انٹرویو پر مبنی وڈیو کا ایک ٹکڑا وائس ویب سائٹ پر اختتام ہفتہ جاری ہوا جس کے بعد اسے بے شمار لوگوں نے دیکھا۔

وائس آف امریکہ سے گفتگو میں ازابیل نے اس واقعے کی تفصیلات کے بارے میں تصدیق کی ہے۔

خاتون فلمساز نے حنفی کی طرف سے خواتین پر تشدد کے خلاف مسودہ قانون کی مخالفت کرنے کے بارے میں سوال کیا۔

ازابیل نے پوچھا کہ "اگر ایک شوہر اپنی بیوی سے جنسی زیادتی کرتا ہے تو کیا یہ گھریلو تشدد ہے، اور اس پر مرد کو سزا ملنی چاہیے کہ اس عورت کو، آپ کی اس بارے میں کیا رائے ہے؟"

قانون ساز نے اس پر جواب دیا کہ "جنسی زیادتی کی ایک قسم آپ کے ہاں ہے اور ایک ہمارے ہاں اسلام میں ہے۔" اس کے بعد انھوں نے اس معاملے کو دباتے ہوئے کہا کہ "میرا خیال ہے اب آپ کو رک جانا چاہیئے۔"

انٹرویو دیکھنے والے وائس آف امریکہ افغان سروس کے ایک رکن کے مطابق جب حنفی وہاں سے اٹھے تو انھوں نے کہا کہ "مجھے شاید تمہیں ایک افغان مرد کے حوالے کر دینا چاہیے" جو تم پر جنسی طور پر قابو پائے گا۔

ان کی اس بات کی غلط تشریح کی گئی کیونکہ جس طرح سے فلمساز کے مترجم نے انھیں بتایا جس کا مطلب کچھ یوں بنتا تھا کہ اس کی ناک کاٹ دی جائے۔

رضا گل کے شوہر نے اس کا ناک کاٹ دیا تھا

رضا گل کے شوہر نے اس کا ناک کاٹ دیا تھا

افغانستان میں ایک مرد کی طرف سے فروری میں اپنی بیوی کی ناک کاٹنے کی خبر منظرعام پر آنے کے بعد اس ملک میں خواتین پر تشدد کے معاملے کو بین الاقوامی توجہ حاصل ہوئی۔

ریڈیو لبرٹی سے بات کرتے ہوئے نذیر احمد حنفی نے پہلے تو ازابیل سے کسی بھی دستاویزی فلم کے بارے میں بات سے انکار کیا۔ "میں ایسے کسی بھی شخص سے نہیں ملا۔" لیکن وڈیو منظر عام پر آنے کے بعد ان کا کہنا تھا کہ شاید کسی نے ان کی نقالی کی ہے۔

"ایک وڈیو بنانا بہت ہی آسان ہے، ایسے لوگ ہیں جو کہ ایک سر، ایک داڑھی اور ایک دھڑ ایک وڈیو میں جوڑ کر ایسے دکھائیں جو کہ اصل سے بھی بہتر نظر آئے۔"

لیکن جب ان سے اس بارے میں مزید کریدا گیا تو ان کا کہنا تھا کہ ازابیل نے ان کا انٹرویو کیا لیکن انھوں نے خاتون کو دھمکی نہیں دی۔

"جب ہم شادی کے معاملات پر بات کر رہے تھے تو میں نے اسے بتایا کہ اگر آپ اس بارے میں جاننا چاہتی ہیں تو آپ ایک افغان مرد سے شادی کر سکتی ہیں۔"

ازابیل ینگ

ازابیل ینگ

ازابیل کی دستاویزی فلم اتوار کو ایچ بی او پر نشر ہوئی۔ ان کا کہنا تھا کہ "اس طرح سے تضحیک بہت ہی اہانت انگیز ہے۔ پورے انٹرویو میں اور حتیٰ کہ اس سے پہلے بھی ماحول بہت معاندانہ تھا۔ یہ واضح تھا کہ ان (حنفی) کے پاس میرے لیے زیادہ وقت نہیں اور وہ میرے کسی بھی سوال کو نہیں سن رہے۔"

ازابیل نے حنفی سے مستعفی ہونے کا مطالبہ کرتے ہوئے اپنے تجربے کے بارے میں کہا کہ "یہ بہت سے افغان عورتوں کو روز مرہ درپیش تضحیک کا بہت ہی بہت ہی چھوٹا سا نمونہ ہے۔"

بہت سے افغان شہریوں نے سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر حنفی کی مذمت کی ہے۔

XS
SM
MD
LG