رسائی کے لنکس

افغانستان: طالبان نے 27 پولیس اہلکار اغوا کر لیے


پولیس کے مطابق یمگان میں شدت پسندوں کے حملے میں کم از کم چھ پولیس اہلکار ہلاک ہو گئے تھے۔

افغانستان میں عہدیداروں نے جمعرات کو بتایا کہ طالبان جنگجوؤں نے ملک کے شمال مشرقی صوبے میں حملہ کر کے 27 پولیس افسران کو اغوا کر لیا ہے۔

حکام کے مطابق یہ ملک سے غیر ملکی افواج کے انخلا سے قبل شدت پسندوں کی طرف سے کارروائیوں میں تیزی کی لہر کا ایک حصہ ہے۔

صوبہ بدخشاں کے پولیس سربراہ جنرل فضل الدین ایار نے بتایا کہ بدھ کو ضلع یمگان میں طالبان کے حملے کے بعد یہ 27 پولیس افسر ایک غار میں چھپے ہوئے تھے۔

اُنھوں نے بتایا کہ طالبان نے ان افسران کو یرغمال بنا لیا ہے اور پولیس نے اُن کی تلاش کے لیے کارروائی شروع کر دی ہے۔

طالبان نے ذرائع ابلاغ کے نام ایک پیغام میں اس حملے کی ذمہ داری قبول کی ہے۔ عموماً جنگجو سکیورٹی فورسز کے اہلکاروں کو یرغمال بنانے کے بعد قتل کر دیتے ہیں۔

پولیس کے مطابق یمگان میں شدت پسندوں کے حملے میں کم از کم چھ پولیس اہلکار ہلاک ہو گئے تھے۔

بدخشاں میں یہ تازہ لڑائی منگل کو شروع ہوئی تھی جو بدھ کو بھی جاری رہی۔ جنرل فضل الدین ایار نے بتایا کہ مزید کمک علاقے میں بھیج دی گئی ہے۔

حملے کے پولیس فورس کو باہر نکال لیا گیا تھا جس کے بعد اُنھوں نے پہاڑیوں سے طالبان جنگجوؤں سے لڑائی کی جب کہ ہیلی کاپٹر بھی فضا میں گردش کرتے رہے۔

حکام کے مطابق لڑائی میں پانچ جنگجو بھی مارے گئے۔

طالبان جنگجوؤں نے ضلعی ہیڈ کوارٹر پر اپنی تحریک کا سفید پرچم لہرایا۔

طالبان نے ملک میں 14 جون کو صدارتی انتخابات کے دوسرے مرحلے میں خلل ڈالنے کی دھمکی دے رکھی ہے۔

اس سے قبل انھوں نے پانچ اپریل کو صدارتی انتخابات کے پہلے مرحلے میں رخنا ڈالنے اور اس میں حصہ لینے والوں کو نشانہ بنانے کی دھمکی دی تھی، تاہم انتخابات کا پہلا مرحلہ پر امن رہا اور بڑی تعداد میں ووٹروں نے اپنا حق رائے دہی استعمال کیا۔

صدارتی انتخاب کے دوسرے مرحلے میں عبد اللہ عبداللہ اور اشرف غنی مد مقابل ہوں گے۔
XS
SM
MD
LG