رسائی کے لنکس

افغانستان میں امدادی کارکن کی ہلاکت کی تحقیقات


افغانستان میں امدادی کارکن کی ہلاکت کی تحقیقات

افغانستان میں امدادی کارکن کی ہلاکت کی تحقیقات

امریکی اور برطانوی عہدے داروں نے اس بارے میں تحقیقات شروع کردیں ہیں کہ مشرقی افغانستان میں برطانیہ کی ایک یرغمالی امدادی کارکن اسے آزاد کرانے کی کارروائی دوران کیسے ہلاک ہوئیں ۔

برطانوی وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون نے پیر کے روز کہا کہ ممکن ہے کہ خاتون امدادی کارکن لنڈانورگروو کی ہلاکت کی وجہ امریکہ کی اسپیشل فورسز ٹیم کی جانب سے پھینکا جانے والا ایک گرینیڈہو، نہ کہ اغوا کار طالبان ، جیسا کہ ابتدائی خبروں میں کہا گیا تھا۔

برطانوی وزیر اعظم نے لندن میں نامہ نگاروں کو بتایا کہ اس واقعہ کی تحقیقات کی جارہی ہیں۔ انہوں نے امدادی کارکن کی بازیابی کے لیے مشن بھیجنے کے فیصلے کا دفاع بھی کیا۔

نورگروو جمعے کے روز افغانستان کے مشرقی صوبے کنٹر میں ہلاک ہوگئی تھیں۔ انہیں 26 ستمبر کو صوبہ کنٹر کی دیوگل وادی سے اغوا کیا گیاتھا۔

پیر کے روز نیٹو نے یہ تصدیق کی کہ جنرل پیٹریئس نے لنڈا نورگروو کی ہلاکت کی تحقیقات کا حکم دیا ہے۔ ابتدائی رپورٹوں سے یہ ظاہر ہواتھا کہ ان کی ہلاکت کی وجہ اغواکاروں میں سے کسی ایک کی جانب سے کیا جانے والے دھماکہ تھا۔ نیٹو کا کہنا ہے کہ ان چھڑانے کی کارروائی کرنے والی ٹیم کے بعد کے جائزے سے خاتون کی ہلاکت کی وجہ کے بارے میں قطعیت کے ساتھ کچھ نہیں کہا جاسکا۔

36 سالہ لنڈا نورگروو امریکی حکومت کے ترقیاتی پروگرام یوایس ایڈ کے ایک پراجیکٹ کی سربراہ تھیں۔

XS
SM
MD
LG