رسائی کے لنکس

افغانستان: شدت پسندوں کے حملوں میں 15 سکیورٹی اہلکار ہلاک


فائل فوٹو

فائل فوٹو

حکام کے مطابق ایک افغان فوجی شدت پسندوں کو فوجی چوکی کے اندر لے آیا جہاں انہوں نے اس کے 10 ساتھیوں کو ہلاک کر دیا۔

افغانستان کے شمالی علاقے میں منگل کو دو الگ الگ حملوں میں کم از کم 15 سکیورٹی اہلکار ہلاک ہو گئے جن میں 10 فوجی بھی شامل ہیں۔

صوبہ جوزجان میں منگل کو طلوع آفتاب سے قبل ہوئے ایک حملے میں شدت پسندوں نے دس فوجیوں کو ہلاک کیا۔

صوبے کے نائب پولیس سربراہ عبدالحفیظ خاشی نے کہا کہ کش ٹیپا ضلع میں ایک چیک پوائنٹ پر ایک سکیورٹی اہلکار نے شدت پسندوں کو اڈے میں داخل ہونے دیا جنہوں نے فائرنگ کر کے دس فوجیوں کو ہلاک کر دیا۔

خاشی نے حملے کا باعث بننے والے فوجی کا نام محمد عالم بتایا اور کہا کہ یہ واضح ہے کہ وہ علاقے میں باغیوں سے جا کر مل گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ حملہ آور اور محمد عالم موقع سے فرار ہو گئے جبکہ سکیورٹی فورسز ان کا پیچھا کر رہی ہیں۔

منگل کو شمالی صوبے بلخ میں پولیس سربراہ کے ترجمان شیر جان درانی کے مطابق سڑک میں نصب ایک بم پھٹنے سے پانچ پولیس اہلکار ہلاک ہو گئے جن میں ایک ضلعی پولیس افسر بھی شامل تھا۔

یہ اہلکار دولت آباد ضلع میں گشت کر رہے تھے جب ان کی کار ایک بم سے جا ٹکرائی۔ اس حملے میں تین اہلکار زخمی بھی ہوئے۔

ان واقعات کی تاحال کسی نے ذمہ داری قبول نہیں کی لیکن حالیہ مہینوں میں طالبان عسکریت پسندوں کی طرف سے سکیورٹی فورسز پر حملوں میں اضافہ دیکھا گیا ہے۔

XS
SM
MD
LG