رسائی کے لنکس

حزب مخالف کے رہنما سام رینسے نے طویل عرصے سے برسراقتدار حکمران پر انتخابی عمل میں دھاندلی کا الزام عائد کیا ہے۔

کمبوڈیا میں عام انتخابات کے لیے اتوار کو ہونے والی پولنگ ختم ہوگئی ہے اور اب گنتی کا عمل شروع ہوگیا ہے۔ توقع کی جارہی ہے کہ اس کے نتیجے میں 28 سال سے برسراقتدار وزیراعظم ہُن سین کو کامیاب ہو جائیں گے۔

حزب مخالف کے رہنما سام رینسے نے طویل عرصے سے برسراقتدار حکمران پر انتخابی عمل میں دھاندلی کا الزام عائد کیا ہے۔

سام رینسے اور ان کی کمبوڈیا نیشنل ریسکیو پارٹی کا کہنا ہے کہ وزیراعظم کی جماعت کمبوڈیئن پیپلز پارٹی حزب مخالف کی بڑھتی ہوئی مقبولیت سے خوفزدہ ہے۔ انھوں نے حکومت پر الزام لگایا ہے اس نے ایسا نظام بنایا ہے جو اس بات کو یقینی بنائے کہ ہُن سین ایک اور مدت کے لیے انتخاب جیت جائیں۔

حکمران جماعت نے دھاندلی کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ وزیراعظم نے دہائیوں تک جاری رہنے والی جنگ، بدامنی اور قتل عام کے تباہ حال ملک کمبوڈیا کو اقتصادی خوشحالی کی راہ پر گامزن کیا۔

سام رینسے رواں ماہ خودساختہ جلاوطنی ختم کرکے اس وقت کمبوڈیا واپس آئے تھے جب وزیراعظم سین نے ان کے خلاف مختلف جرائم کے مقدمات میں ان کے لیے معافی کا اعلان کیا تھا۔ رینسے کا کہنا تھا کہ یہ مقدمات سیاسی مقاصد کے لیے بنائے گئے تھے۔

انتخابات میں رجسٹرڈ ووٹروں کی تعداد 96 لاکھ سے زائد ہے جن میں کم ازکم ایک تہائی تعداد 30 سال سے کم عمر لوگوں کی ہے۔
XS
SM
MD
LG