رسائی کے لنکس

زیادہ دوست رکھنے والے بچے مستقبل میں زیادہ کمائیں گے: تحقیق


فائل فوٹو

فائل فوٹو

تحقیق کی مصنفین لوسیا باربون اور پیٹر ڈولٹن نے کہا کہ مطالعے سے پتہ چلا کہ اسکول میں طالب علموں کی مقبولت اور ہر دلعزیزی کا گریجوایشن کے 13 برس بعد کی آمدنی پر مثبت اثر تھا۔

شخصیت اور مستقبل کی اعلیٰ آمدنی کے درمیان تعلق کےحوالے سے شائع ہونے والے ایک نئے جائزے میں بتایا گیا ہے کہ جو بچے اسکول میں زیادہ دوست بناتے ہیں اور زیادہ ملنسار ہوتے ہیں وہ مستقبل میں اعلیٰ آمدنی حاصل کرتے ہیں۔

رائل اکنامک سوسائٹی کی سالانہ کانفرنس میں رواں ہفتے پیش کی جانے والی رپورٹ کے مطابق جن بچوں کے ثانوی اسکول میں دوستوں کی تعداد زیادہ تھی، وہ بعد کی زندگی میں اپنے دیگر ساتھیوں کے مقابلے میں 10 فیصد زیادہ آمدنی کا لطف اٹھا رہے تھے۔

تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ یہ نتیجہ ایسے بچوں پر اور بھی زیادہ واضح تھا، جو نوجوانی میں لوگوں کے فیورٹ یا ہر دلعزیز کہلائے جاتے تھے۔

رپورٹ میں تجویز کیا گیا ہے کہ بچوں کی اسکولوں کی غیر نصابی سرگرمیاں، اسکول کلب اور تقریبات میں طالب علموں کو ایک دوسرے سے گھلنے ملنے کا وقت ملتا ہے جس کا ان کے مستقبل پر فائدہ ہے۔

تحقیق کا عنوان ثانوی اسکول نیٹ ورکنگ کے اثرات اور آمدنی تھا۔ جس میں اسکولوں کے ذریعے بالغ زندگی میں ان کی قسمت کا تجزیہ کرنے کے لیے، امریکی جائزے ایڈ ہیلتھ کے اعداد و شمار کا استعمال کیا گیا۔ اس سروے میں بچوں کے اسکول کے دوستوں کی معلومات بھی شامل تھیں۔

تحقیق کی مصنفین لوسیا باربون اور پیٹر ڈولٹن نے کہا کہ مطالعے سے پتہ چلا کہ اسکول میں طالب علموں کی مقبولیت اور ہر دلعزیزی کا گریجوایشن کے 13 برس بعد کی آمدنی پر مثبت اثر تھا۔

یہ اثر اس وقت اور بھی نمایاں تھا جب بچے کے دوستوں کا حلقہ زیادہ وسیع تھا یا پھر وہ اپنے گروپ میں اہم کھلاڑی کی حیثیت سے موجود تھا جس میں دوسروں کو متاثر کرنے کی صلاحیت تھی۔

انھوں نے کہا کہ ایسا لگتا ہے کہ اسکول میں دوستوں کے درمیان اہم ہونا بالغ زندگی میں بہتر معاوضہ کی صورت میں آپ کو واپس مل جاتا ہے۔

تاہم ان کا کہنا تھا کہ سماجی میل جول کو صرف دوستوں سے تعلقات کا نام نہیں دیا جا سکتا ہے بلکہ اس کے ساتھ اسٹریٹیجک خصوصیات بھی شامل ہیں۔

سسیکس یونیورسٹی کی تحقیق کا نتیجہ بتاتا ہے کہ بچپن اور نوجوانی میں بچوں کی سماجی میل ملاپ کے ہنر کی ترقی کے لیے زیادہ توجہ دینی چاہیئے مثلاً سماجی سرگرمیوں اور اسکول کلب کے ذریعے بچوں میں ملنساری کو فروغ دیا جائے۔

تجزیہ کاروں نے لکھا کہ جو نوجوان معاشی طور پر زیادہ مستحکم نہیں ہیں انھیں غربت سے چھٹکارا حاصل کرنے کے لیے سماجی مہارت کو ترقی دینی چاہیئے۔

تحقیق سے نتیجہ اخذ کرتے ہوئے تجزیہ کاروں نے لکھا کہ اعلیٰ معاوضہ کی ملازمتوں کے لیے ذہانت، یاداشت اور استدلال جیسے عوامل کا ہونا بہت ضروری ہے لیکن دوسرے عوامل مثلاً سماجی برتاؤ اور شخصیت کا سحر انگیز ہونا بھی اتنا ہی ضروری ہے۔

XS
SM
MD
LG