رسائی کے لنکس

چین افغانستان کو سکیورٹی آلات، تربیت فراہم کرے گا


فائل

فائل

افغان ہم منصب سے گفتگو کرتے ہوئے صدر جن پنگ نے کہا کہ سکیورٹی تعاون میں اضافہ دونوں ممالک کے مفاد میں ہے۔

چین نے افغانستان کو سکیورٹی آلات اور سرکاری اہلکاروں کو ان کے استعمال کی تربیت فراہم کرنے کا اعلان کیا ہے۔

چین کی جانب سے یہ پیش کش صدر ژی جن پنگ نے اپنے افغان ہم منصب اشرف غنی کے ساتھ جمعے کو روس کے شہر اوفا میں ہونے والی ملاقات میں کی ہے۔

چینی وزارتِ خارجہ کی جانب سے جاری کیے جانے والے ایک بیان کے مطابق افغان ہم منصب سے گفتگو کرتے ہوئے صدر جن پنگ نے کہا کہ سکیورٹی تعاون میں اضافہ دونوں ممالک کے مفاد میں ہے۔

انہوں نے کہا کہ چین افغانستان کو سکیورٹی آلات، ٹیکنالوجی اور تربیت فراہم کرتا رہے گا۔

بیان میں چین کی جانب سے افغانستان کو دی جانے والی امداد اور اعانت کی تفصیل موجود نہیں ہے لیکن چین حالیہ برسوں کے دوران بارہا افغان حکومت کے لیے ہر ممکن امداد اور تعاون کی یقین دہانی کراتا آیا ہے۔

چینی حکومت کا موقف رہا ہے کہ اس کی افغانستان میں دلچسپی کا مقصد وہاں سے غیر ملکی خصوصاً امریکی فوج کے انخلا سے پیدا ہونے والے سکیورٹی خلا کو پر کرنا نہیں بلکہ جنگ زدہ افغانستان کو تعمیر و ترقی اور بحالی میں مدد دینا ہے۔

چین کے صدر پانچ بڑی ترقی پذیر ریاستوں کے نمائندہ گروپ 'برِکس' کے سربراہی اجلاس میں شرکت کے لیے اوفا میں ہیں جہاں تنظیم کے دیگر رکن ملکوں – برازیل، روس، بھارت اور جنوبی افریقہ - کے علاوہ پاکستان اور افغانستان سمیت کئی ترقی پذیر ملکوں کے رہنما بھی شریک ہوئے۔

دو روزہ اجلاس میں شریک عالمی رہنماؤں نے افغانستان کی سکیورٹی کی صورتِ حال پر بھی تبادلۂ خیال کیا۔

XS
SM
MD
LG