رسائی کے لنکس

بھارت میں سب سے بدترین ریل حادثہ 1981ء میں ہوا تھا جب ایک مسافر ریل گاڑی بھاگمتی دریا میں جا گری تھی اور اس میں تقریباً 800 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

بھارت میں مسافر ریل کے حادثے میں مرنے والوں کی تعداد پیر کو 145 تک پہنچ گئی جب کہ اب بھی امدادی ٹیمیں جائے حادثہ پر ایک دوسرے میں پھنسی بوگیوں کو علیحدہ کرنے کے کام میں مصروف ہیں۔

اتوار کو علی الصبح اندور اور پٹنہ کے درمیان چلنے والی مسافر ریل گاڑی 27 گھنٹوں کے اس سفر کی آدھی مسافت کی طے کر پائی تھی کہ کانپور کے نزدیک پوکھراں کے مقام پر اس کی 14 بوگیاں اچانک پٹڑی سے اتر گئیں۔

یہ حادثہ اتنا شدید تھا کہ کئی بوگیاں ایک دوسری پر چڑھ گئیں اور درجنوں مسافر ان میں پھنس کر رہ گئے۔

حادثے کی اطلاع ملتے ہی امدادی ٹیمیں جائے حادچہ پر پہنچیں اور زخمیوں اور لاشوں کو اسپتال منتقل کرنا شروع کیا۔

بعد ازاں فوج کے اہلکار اور بھاری مشینری بھی یہاں پہنچا دی گئی جو رات بھر امدادی سرگرمیوں میں معاونت کرتے رہے۔

پیر کی صبح تک تمام تباہ شدہ بوگیوں کی تلاش مکمل کر کے ان میں پھنسے افراد کو نکالا جا چکا تھا لیکن خدشہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ اب بھی کچھ لوگ ان بوگیوں کے ملبے کے نیچے دبے ہو سکتے ہیں جس سے ہلاکتوں میں اضافہ ہو سکتا ہے۔

بھارتی ریلویز کے ایک ترجمان انیل سکسینا کے مطابق جائے حادثہ پر مسافروں کی تلاش کا کام تقریباً مکمل ہو چکا ہے۔

"ابھی کرینوں کی مدد سے بوگیوں کو ہٹانے کا کام جاری ہے اور یہ دیکھا جائے گا کہ کوئی لاش ان کے نیچے تو نہیں ہے۔ ہم اس وقت تک ہی کچھ یقین سے کہہ سکیں گے جب کہ تمام بوگیوں کو یہاں سے ہٹا نہیں لیا جاتا۔"

145 لاشوں میں سے 116 کی شناخت ہو چکی ہے جب کہ حادثے میں زخمی ہونے والے 225 افراد میں سے اب بھی بیشتر اسپتال میں زیر علاج ہیں۔

مسافروں کے رشتے دار اپنے پیاروں کی خیریت جاننے کے لیے اضطراب کا شکار ہیں اور وہ مختلف اسپتالوں میں ان کے بارے میں معلومات حاصل کرنے میں سرگرداں دکھائی دیتی ہیں۔

تاحال اس حادثے کی وجہ معلوم نہیں ہو سکی ہے لیکن ریلوے انتظامیہ نے اس کی مکمل تحقیقات کا حکم دے دیا ہے۔

مقامی ذرائع ابلاغ میں یہ خبریں سامنے آئی ہیں کہ بوگیاں بظاہر ریلوے لائن میں خرابی کے باعث پٹڑی سے اتریں۔

اس واقعے کو بھارتی ریل کی تاریخ کے بدترین حادثوں میں سے ایک قرار دیا جا رہا ہے۔

ریلوے کے وزیر راجن گوہین نے اخبار "انڈین ایکسپریس" کو بتایا کہ "ہم نے طویل عرصے میں ایسا کوئی واقعہ نہیں دیکھا، یہ ریلوے ٹریک میں خرابی سے ہوا ہوگا گو کہ لائنوں کا معائنہ باقاعدگی سے کیا جاتا ہے۔"

بھارت میں ریل کے حادثات کوئی غیر معمولی بات نہیں۔ 2012ء میں حکومت کی جاری کردہ ایک رپورٹ کے مطابق بھارت میں ہر سال ریل کے حادثات میں لگ بھگ 15 ہزار افراد موت کا شکار ہو جاتے ہیں۔

بھارت میں سب سے بدترین ریل حادثہ 1981ء میں ہوا تھا جب ایک مسافر ریل گاڑی بھاگمتی دریا میں جا گری تھی اور اس میں تقریباً 800 افراد ہلاک ہو گئے تھے۔

XS
SM
MD
LG