رسائی کے لنکس

جاری ہونے والے انتظامی حکم نامے کی رو سے اجازت یافتہ دواساز 18برس سے کم عمر کے افراد کو ’فلو شوٹس‘ لگا سکیں گے، اور اِس طرح چھ ماہ کے کمسن بچوں تک کی ’ ویکسی نیشن‘ کی بھی راہ ہموار ہو گئی ہے

امریکہ میں ’انفلوئنزا‘ کی متعدی بیماری پھیلنے کے بعد، جس نے کینیڈا کے کچھ علاقوں کو بھی اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے، ہفتے کے روز نیو یارک کی ریاست نے صحت عامہ کی ہنگامی صورتِ حال کا اعلان کیا ہے۔

انتظامی حکم نامے کی رو سے اجازت یافتہ دواساز 18 برس سے کم عمر کے افراد کو ’فلو شوٹس‘ لگا سکیں گے، اور اِس طرح، چھ ماہ کے کمسن بچوں تک کی ’ ویکسی نیشن‘ کی بھی راہ ہموار ہو گئی ہے۔

بوسٹن کے میئر نے رواں ہفتے کے آغاز پر اِسی قسم کا ایک اعلان کیا جِس میں لوگوں پر زور دیا گیا ہے کہ وائرس سے نجات کے لیے ویکسین لگوائیں۔

یہ مہم ایسے وقت سامنے آئی ہے جب امریکہ کے صحت سے متعلق عہدے دار 50میں سے 47ریاستوں میں فلو کا مرض پھیلنے کے خلاف جدوجہد کر رہے ہیں، جس کے باعث کم از کم 20بچے ہلاک ہو چکے ہیں۔

اِس میں علیحدہ سے نوجوانوں کی تعداد کا شمار پیش نہیں کیا گیا۔

تاہم، امریکہ کے بیماری پر کنٹرول کےمراکز کے ایک اندازے کے مطابق فلو کے باعث ہر موسم کے دوران 20000سے زائد امریکی فوت ہوتے ہیں۔

کینیڈا کے میڈیا نے صحت کے عہدے داروں کے حوالے سے خبر میں کہا ہے کہ گذشتہ ہفتے ملک کے سات صوبوں میں فلو کے تقریباً 4000کیسز کا پتا چلا ہے، جِن کا اندراج طویل مدت تک علاج کے سہولیات کے مراکز نے قلمبند کیا ہے۔

تبصرے دکھائیں

XS
SM
MD
LG