رسائی کے لنکس

فرانس: امریکی فیکٹری پر حملہ، داعش کی کارروائی


وکیل استغاثہ

وکیل استغاثہ

سرکاری وکیل کے مطابق، منگل کو حملے میں ملوث مشتبہ شخص یاسین صلاحی دہشت گردی کا رجحان رکھتا تھا، اسی لئے اس نے اپنے مالک کا سر قلم کیا اور گیس فیکٹری پر حملہ کیا

فرانس کے سرکاری وکیل فرانسواں مولین نے کہا ہے کہ جمعہ کو لائیون بیئر میں امریکی گیس کمپنی پر ہونے والا حملہ داعش کے لڑاکوں کی بڑی کارروائی تھی۔

سرکاری وکیل کے مطابق، منگل کو حملے میں ملوث مشتبہ شخص یاسین صلاحی دہشت گردی کا رجحان رکھتا تھا، اسی لئے اس نے اپنے مالک کا سر قلم کیا اور گیس فیکٹری پر حملہ کیا۔

شک یہ ہے کہ فیکڑی گراؤنڈ میں اس کی گاڑی کے ٹکرانے کی وجہ سے ہی جمعہ کو فیکڑی میں دھماکہ ہوا تھا۔

جمعہ کو ہونے والے اس حملے کے بعد فرانسسی صدر فرانسواں اولاں نے ران الپس کے علاقے میں سیکورٹی سخت کردی ہے۔

انھوں نے سکیورٹی سخت کرنے کے یہ احکامات سینٹ کوائنٹائن میں امریکی کمپنی پر حملے کے چند گھنٹے بعد موجودہ صورتحال پر طلب کردہ ایک اعلی سطحی اجلاس کے بعد جاری کیے تھے۔

اس کے تحت اس گیس فیکٹری پر انسداد دہشت گردی فورس تعینات کردی گئی جہاں سے عربی تحریر کے ساتھ ایک لاش اور سر برآمد ہوا تھا، اس جگہ سے اسلامی گروپ کا ایک جھنڈا بھی برآمد ہوا تھا۔

فرانس میں اس سال جنوری سے جب پیرس کے رسالے کے صدر دفتر اور ایک کوشر سپرمارکیٹ پر حملہ ہوا تھا، سیکورٹی سخت ہے۔ تاہم، اس دوران، تشدد کے واقعات میں مجموعی طور پر 20 افراد ہلاک ہوئے۔

XS
SM
MD
LG