رسائی کے لنکس

جرمنی نے گزشتہ سال 11 لاکھ افراد کو پناہ دی: رپورٹ


فائل

فائل

جرمنی میں داخل ہونے والے مہاجرین میں سے ایک بڑی تعداد کا تعلق شام سے تھا جس کے چار لاکھ 28 ہزار 468 شہریوں نے جرمنی میں پناہ حاصل کی۔

جرمنی کی حکومت نے کہا ہے کہ 2015ء کے دوران لگ بھگ 11 لاکھ افراد نے جرمنی میں پناہ گزین کی حیثیت سے اپنا اندراج کرایا ہے۔

بدھ کو جاری کیے جانےو الے سرکاری اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ سال جرمنی میں داخل ہونے والے مہاجرین میں سے ایک بڑی تعداد کا تعلق شام سے تھا جس کے چار لاکھ 28 ہزار 468 شہریوں نے جرمنی میں پناہ حاصل کی۔

گزشتہ پانچ برسوں سے جاری خانہ جنگی سے بے حال لاکھوں شامی باشندوں نے گزشتہ سال کے آخری چند ماہ کے دوران یورپ کا رخ کیا تھا جس کے باعث یورپ میں بحرانی صورتِ حال پیدا ہوگئی تھی۔

جنگِ عظیم دوم کے بعد یہ پہلا موقع تھا جب یورپی ملکوں کو اتنی بڑی تعداد میں پناہ گزینوں کا سامنا کرنا پڑا تھا۔

اس بحران کے دوران جرمنی کی چانسلر آنگلا مرخیل نےقائدانہ کردار ادا کیا تھا جن کی حکومت نے نہ صرف اپنے ملک کے دروازے ان پناہ گزینوں کے لیے کھول دیے تھے بلکہ یورپ کے دیگر ملکوں کو بھی ان مہاجرین کو پناہ دینے پر آمادہ کرنے کی سرگرمی سے مہم چلائی تھی۔

جرمن حکومت کے اعداد و شمار کے مطابق سال 2015ء میں جرمنی میں داخل ہونے والے تارکینِ وطن میں تعداد کےا عتبار سے دوسرے نمبر پر افغانستان اور تیسرے پر عراق کے شہری رہے۔

حکام کے مطابق 2015ء میں جرمنی میں پناہ حاصل کرنے والے افغانوں کی تعداد ایک لاکھ 54 ہزار 46 جب کہ عراقیوں کی ایک لاکھ 21 ہزار 662 رہی۔

جرمن حکومت کا کہنا ہے کہ 2015ء میں پناہ کے تلاش میں جرمنی آنے والوں کی تعداد 2014ء کے مقابلے میں پانچ گنا زیادہ تھی۔

جرمنی میں داخل ہونے والے بیشتر پناہ گزین افریقہ اور مشرقِ وسطیٰ سے خستہ حال کشتیوں کے ذریعے بحیرۂ ایجئن اور بحیرہ روم عبور کرکے پہلے یونان اور اٹلی پہنچے جہاں سے انہوں نے یورپ کے دیگر ملکوں کو رخ کیا۔

یورپی حکام کے مطابق گزشتہ سال کے دوران بحری راستوں سے غیر قانونی طور پر یونان پہنچنے والے پناہ گزینوں کی تعداد ساڑھے آٹھ لاکھ تھی جن کی اکثریت نے بہتر مستقبل اور پناہ کی تلاش میں انسانی اسمگلروں کو اپنی کل جمع پونجی دے کر بے سروسامانی کے عالم میں خستہ حال کشتیوں کے ذریعے یورپ کا رخ کیا۔

XS
SM
MD
LG