رسائی کے لنکس

بازارِ حصص میں جمعرات کے خلفشار کی چھان بین کی جارہی ہے: اوباما


صدر براک اوباما نے کہا ہے کہ حکومت کے ضابطہ کار جمعرات کے روز امریکہ کے بازارِ حصص میں قیمتوں میں انتہائى تیزی سے کمی آجانے کے واقعے کا گہری نظر سے جائزہ لے رہے ہیں۔

صدر نے کہا ہے کہ متعلقہ عہدے داروں کو سرمایہ کاروں کو تحفظ فراہم کرنے اور مستقبل میں اس قسم کی تباہی کی روک تھام کرنے سے دلچسپی ہے۔

جمعرات کے روز امریکہ میں بازارِ حصص کا ایک اہم اشاریہ، ڈاؤ جونز انڈسٹریل تقریباً 1000 پوائنٹ نیچے چلا گیا اور اس کے نتیجے دنیا بھر میں حصص کے قیمتیں10 کھرب ڈالر کم ہوگئیں۔ تاہم بعد میں امریکی حصص میں کچھ تیزی آگئى اور بازار بند ہونے پرنقصان تقریباً تین پوائنٹ تھا۔

امریکہ کے سکیوریٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن، محکمہ خزانہ اور کانگریس کی کم سے کم ایک کمیٹی نے کہا ہے کہ وہ اس معاملے کا جائزہ لے رہی ہے۔

مطبوعہ اطلاعات میں ماہرین کے حوالے سے کہا گیا ہے ہوسکتاہے کہ لین دین میں کسی غلطی کی وجہ سے قیمتیں گرنا شروع ہوئى ہوں ۔ مثلاً کسی چیزکے اگر ایک کروڑ مالیت کے حصص فروخت کرنا مقصود تھے تو اس کی بجائے ایک ارب ڈالر کے حصص فروخت کردیے ۔

عہدے دار اور سرمایہ کار اس بارے میں بھی غور کررہے ہیں اُن بہت سے کمپیوٹر پروگراموں کو کس طرح ضابطوں کے تحت لایاجائے، جو پلک جھپکتے اربوں ڈالر کے حصص کی خریدو فروخت کرسکتے ہیں۔ایک خیال یہ ہے اس قسم کے کمپیوٹر پراگراموں نے بازارِحصص میں کسی ایک غلطی کے اثرات میں ایک دم کئى گُنا اضافہ کردیا۔

اور یہ سب کچھ یونان میں جاری قرضوں کے اُس بحران کے پس منظر میں ہوا ، جس کے باعث پہلےہی بازارِ حصص میں کئى دن سے مندے کا رُجحان جاری ہے۔

جمعے کے روز یورپ میں بازارِحصص کا ایک اہم اشاریہ، پیرس میں سی اے سی40 بازار بند ہونے پر ایک پوائنٹ کے تقریباً پانچ فیصد کے برابر نیچے تھا۔ایشیا میں بازار بند ہونے پر ٹوکیو میں نِکائى تین فیصد نیچے تھا اور امریکہ کے بازارِ حصص کے اشاریوں میں تلاطم خیز زِیرو بم جاری ہے۔

XS
SM
MD
LG