رسائی کے لنکس

جوہری توانائی ایجنسی کے سربراہ ایران جائیں گے


فائل

فائل

علی اکبر صالحی نے بتایا کہ عالمی ادارے کے 12 سے 13 ماہرین کی ایک ٹیم منگل کو تہران پہنچ رہی ہے جب کہ عالمی ادارے کے سربراہ بھی آئندہ تین سے چار روز میں تہران کا دورہ کریں گے۔

اقوامِ متحدہ کی جوہری توانائی ایجنسی (آئی اے ای اے) کے سربراہ یوکیا امانو رواں ہفتے ایران کا دورہ کریں گے جہاں وہ ایرانی حکام کے ساتھ جوہری معاہدے پر عمل درآمد کے طریقہ کار پر گفتگو کریں گے۔

یوکیا امانو کے دورے کا اعلان ایران کے اعلیٰ جوہری مذاکرات کار علی اکبر صالحی نے پیر کی شب ویانا میں عالمی ادارے کے سربراہ سے ملاقات کےبعد کیا۔

'آئی اے ای اے' نے بھی ذرائع ابلاغ کو بھیجے گئے ایک ای میل پیغام میں یوکیا امانو کے دورۂ ایران کی تصدیق کرتےہوئے کہا ہے کہ دورے کی تفصیلات طے کی جارہی ہیں۔

پیر کی شب ویانا میں ایران کے سرکاری ٹی وی سے گفتگو کرتے ہوئے علی اکبر صالحی نے بتایا کہ عالمی ادارے کے 12 سے 13 ماہرین کی ایک ٹیم منگل کو تہران پہنچ رہی ہے جب کہ عالمی ادارے کے سربراہ بھی آئندہ تین سے چار روز میں تہران کا دورہ کریں گے۔

ایرانی رہنما نے امید ظاہر کی تھی کہ ایران کےجوہری پروگرام سے متعلق باقی ماندہ معاملات 15 دسمبر تک طے پاجائیں گے جس کے بعد ایران اور چھ عالمی طاقتوں کے درمیان طے پانے والے جوہری معاہدے پر عمل درآمد شروع ہوسکے گا۔

ایران اور چھ عالمی طاقتوں نے جولائی میں ہونے والے اس معاہدے پر عمل درآمد کی نگرانی مشترکہ طور پر 'آئی اے ای اے' کو سونپی ہے جس کے افسران نگرانی کا طریقہ کار طے کرنے کے لیے ایرانی حکام کے ساتھ مشاورت میں مصروف ہیں۔

ایجنسی ایرانی جوہری تنصیبات کے تفصیلی معائنے اور متعلقہ حکام سے ملاقاتوں کے بعد اپنی حتمی رپورٹ 15 دسمبر تک فریقین کو پیش کرے گی جس کے بعد جوہری معاہدے پر عمل درآمد کا آغاز ہوگا۔

معاہدے کے تحت ایران اپنی جوہری سرگرمیاں بتدریج کم کرے گا جس کے جواب میں امریکہ اور یورپی ممالک اس پر عائد اقتصادی پابندیاں اٹھالیں گے۔

فریقین کے درمیان ہونے والے سمجھوتے کے تحت 'آئی اے ای اے' کے افسران ایران کی جوہری تنصیبات کے معائنے کے علاوہ ایران کے جوہری پروگرام کے نگران ادارے 'اٹامک انرجی آرگنائزیشن آف ایران' کے حکام سے ملاقاتیں بھی کریں گے جس کے سربراہ علی اکبر صالحی ہیں۔

XS
SM
MD
LG