رسائی کے لنکس

گجرات کے وزیرِ داخلہ مستعفی

  • سہیل انجم

گجرات کے سابق وزیرِ داخلہ امیت شاہ

گجرات کے سابق وزیرِ داخلہ امیت شاہ

قتل کے الزام اور متوقع گرفتاری کا سامنا کرنے والے گجرات کےوزیرِداخلہ، اور وزیرِ اعلیٰ نریندر مودی کے قریبی دوست، امیت شاہ نے استعفیٰ دے دیا ہے، لیکن وہ ابھی تک مفرورہیں۔

تحقیقاتی ادارہ، سی بی آئی، گجرات میں مختلف ٹھکانوں پر اُن کو تلاش کر رہا ہے اور وہ گرفتاری سے بچ رہے ہیں۔

نریندر مودی نے جو کہ ایک اجلاس میں شرکت کی غرض سے دہلی آئے ہوئے ہیں، ہفتے کے روز نامہ نگاروں کو استعفے کی اطلاع دی۔

اُنھوں نے یہ بھی کہا کہ امیت شاہ بے قصور ہیں اور مرکزی حکومت سی بی آئی کا غلط استعمال کر رہی ہے۔ بھارتیا جنتا پارٹی نے بھی حکومت پر یہی الزام عائد کیا ہے اور اُس نے اِسی بنیاد پر جمعے کے روز وزیرِ اعظم کے روایتی ظہرانے میں شرکت سے انکار کیا جب کہ حکومت نے اِس الزام کو یکسر بے بنیاد قرار دے کر مسترد کر دیا ہے۔

واضح رہے کہ سپریم کورٹ کی ہدایت پر اور اُس کی نگرانی میں سی بی آئی سہراب الدین فرضی مقابلے کی جانچ کر رہی ہے اور اُس نے ایک روز قبل امیت شاہ پر اغوا، قتل، مجرمانہ سازش، ثبوتوں کے ساتھ چھیڑ چھاڑ اور گواہوں کو متاثر کرنے کے الزامات عائد کیے ہیں۔

اُس نے دوبار سمن بھی جاری کیا لیکن امیت شاہ نے حاضر ہونے کے بجائے پیشگی ضمانت کی درخواست دے دی جسے سی بی آئی کی خصوصی عدالت نے مسترد کردیا۔

یاد رہے کہ 2005ء میں سہراب الدین اور اُس کی اہلیہ کو ایک فرضی مقابلے میں ہلاک کر دیا گیا تھا۔ اِس کیس میں گجرات کے پولیس کے اعلیٰ عہدے داروں کو گرفتار کیا جاچکا ہے۔

XS
SM
MD
LG