رسائی کے لنکس

نئی دہلی میں یومیہ 12بچے اغوا ہوتے ہیں: پولیس ذرائع

  • سہیل انجم
  • نئی دہلی

بھارتی بچے

بھارتی بچے

جِن بچوں کو تلاش کر لیا گیا ہے اُن کی گمشدگی کی وجوہات میں والدین کا غلط سلوک، دوسرے لوگوں کے ذریعے گمراہ کیا جانا، تعلیم کا بوجھ، دماغی خلل یا کسی کے ساتھ بھاگ جانا شامل ہے

حکومت کے اعداد و شمار کے مطابق، اِس وقت پورے بھارت میں 55000بچے لاپتا ہیں اور محکمہ ٴ پولیس اُن کا سراغ لگانے میں ناکام رہا ہے، جب کہ دارالحکومت دہلی میں روزانہ12 بچے لاپتا ہوتے ہیں، جِن میں اکثریت لڑکیوں کی ہے۔

اِس سلسلے میں سپریم کورٹ نے مرکز اور تمام ریاستی حکومتوں کو نوٹس جاری کیا ہے۔ اُس نے یہ کارروائی مفادِ عامہ کی ایک عذر داری پر سماعت کے دوران کی، جسے ایک وکیل سرو مِترا نے داخل کیا ہے۔

جسٹس آفتاب عالم کی سربراہی والے بینچ نے اِس بارے میں حکومتوں سے جواب طلب کیا ہے۔ عذر داری میں کہا گیا ہے کہ لاپتا بچے اذیت ناک حالت سے دوچار ہوتے ہیں۔ اُن کو اغوا کرنے والے گروہ کسی بچے کا ایک ہاتھ کاٹ دیتے ہیں تو کسی کا ایک پیر اور کسی کی آنکھ پھوڑ دیتے ہیں۔پھر اُنھیں بھیک مانگنے پر مجبور کر دیا جاتا ہے یا جسم فروشی کے دھندے میں دھکیل دیا جاتا ہے۔

عذرداری میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ پولیس ٕمحکمہ اغوا کے معاملات کی جانچ کرنے اور لاپتا بچوں کو تلاش کرنے میں ناکام رہاہے۔ یہ صورت حال اِن معصوم بچوں کو زندہ رہنے کے حق اور آزادی سے محروم کرنے جیسا ہے۔ ایسے بچوں کی خرید و فروخت بھی ہوتی ہے اور اُن کا جنسی استحصال بھی کیا جاتا ہے۔
ادھر، دہلی پولیس کے ریکارڈ کے مطابق دارالحکومت دہلی میں ایک سال کے اندر 3171بچے لاپتا ہوئے ہیں، جن میں 1652لڑکیاں اور 1519لڑکے ہیں۔

یہاں یومیہ 12بچے غائب ہوتے ہیں۔ تاہم، پولیس کا کہنا ہے کہ گذشتہ سال کےمقابلے میں امسال گمشدگی کی شرح کم ہوئی ہے، کیونکہ گذشتہ سال 14بچے یومیہ گم ہورہے تھے۔ لیکن، ایک اعلیٰ پولیس افسر کےمطابق بچوں کی گمشدگی کی کوئی ایک خاص وجہ نہیں ہے۔

جِن بچوں کو تلاش کر لیا گیا ہے اُن کی گمشدگی کی وجوہات میں والدین کا غلط سلوک، دوسرے لوگوں کے ذریعے گمراہ کیا جانا، تعلیم کا بوجھ، دماغی خلل یا کسی کے ساتھ بھاگ جانا شامل ہے۔
XS
SM
MD
LG