رسائی کے لنکس

کشمیری عوام کے زخموں پر مرہم رکھنے کی بھارتی وزیرِ اعظم کی کوشش

  • سہیل انجم

بھارتی وزیرِاعظم من موہن سنگھ

بھارتی وزیرِاعظم من موہن سنگھ

وزیرِاعظم من موہن سنگھ نے بھارتی کشمیر کی موجودہ صورتِ حال پر تشویش کااظہار کرتے ہوئے کشمیری عوام کے زخموں پر ایک بار پھر مرہم رکھنے کی کوشش کی ہے اور کہا ہے کہ اُن کی شکایات کو دور کرنے کی ضرورت ہے۔

اُنھوں نے یہ وعدہ بھی کیا کہ جو لوگ تشدد ترک کردیں گے اُن کے ساتھ بھارتی آئین کے دائرے میں رہ کر مذاکرات کیے جائیں گے۔

حکومت کی جانب سے صورتِ حال سے نمٹنے کے لیے مختلف امکانات تلاش کرنے کے سلسلے میں وزیرِ اعظم نے عوام کو بہتر خدمت فراہم کرنے اور اُن کی اقتصادی ترقی کے لیے مواقع پیدا کرنے کی ضرورت پر بھی زور دیا۔

وزیرِ اعظم نئی دہلی میں اعلیٰ فوجی کمانڈروں کے ایک اجلاس کے افتتاح کے موقع پر خطاب کررہے تھے۔ تاہم، اُنھوں نے اپنی تقریر میں متنازع آرمڈ فورسز اسپیشل ایکٹ کا کوئی ذکر نہیں کیا۔

عمر عبداللہ، جو اِس وقت نئی دہلی میں ہیں، وزیرِ داخلہ پی چدم برم اور کانگریس صدر سونیا گاندھی سے ملاقات کرکے اِس قانون کو بعض علاقوں سے ہٹانے کا مطالبہ کیا۔

اِس قانون کو ہٹانے کے سلسلے میں کابینہ میں اختلاف ِ رائے ہے اور میڈیا میں اِس کی خبریں آنے کے بعد وزیرِ داخلہ اے کے اینٹونی کو وضاحت کرنی پڑی ہے کہ اِس بارے میں کوئی اختلاف نہیں ہے۔

اُدھر اپوزیشن جماعت بھارتیا جنتا پارٹی (بی جے پی) اور فوج کی جانب سے بھی اِس قانون کے ہٹانے کی سخت مخالفت کی جارہی ہے۔

دریں اثنا، اِس سوال پر غوروفکر کرنے اور کوئی فیصلہ کرنے کی غرض سے نئی دہلی میں سلامتی سے متعلق کابینہ کمیٹی کا اجلاس منعقد ہورہا ہے۔

XS
SM
MD
LG