رسائی کے لنکس

ایران جوہری پروگرام کی نگرانی میں رکاوٹ پیدا کررہا ہے:اقوام متحدہ

  • ب

اقوام متحدہ کے جوہری امور کی نگران ایجنسی کا کہنا ہے کہ اس کے معائنہ کاروں کو معلومات اور رسائی فراہم کرنے سے انکار کرکے ایران اپنے جوہری پروگرام کی نگرانی میں خلل ڈال رہا ہے۔ معائنہ کاروں کو یہ تعین کرنے کے لیے کہ آیا تہران جوہری ہتھیار بنا نے کی کوشش کررہا ہے یا نہیں یہ معلومات درکار ہیں۔

پیر کوجوہری توانائی کے عالمی ادارے آئی اے ای اے کی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ گذشتہ دو سالوں سے ایران اپنے ممکنہ خفیہ جوہری پروگرام سے متعلق سوالات کا جواب دینے سے انکاری ہے۔

آئی اے ای اے کا یہ بھی کہنا تھا کہ ایران اس کے معائنہ کاروں کی طرف سے کی جانے والی دیرینہ درخواستوں پر عمل درآمد کرنے میں ناکام ہوگیا ہے اور تہران کی طرف سے بار بار معائنہ کاروں کی تقرریوں پر اعتراضات نے بھی ایجنسی کے کام کو متاثر کیا ہے۔

ایران نے جون میں ایجنسی کے دو تجربہ کار جوہری معائنہ کاروں کو یہ کہہ کر ملک میں داخل ہونے سے روک دیا تھا کہ ان کے بیانات جھوٹے اور غلط ہیں۔ آئی اے ای اے نے ان اعتراضات کو رد کردیا تھا۔

آئی اے ای اے میں ایران کے نمائندے علی اصغر سلطانیہہ نے ادارے کے ان الزامات کو مسترد کردیا تھا کہ ایران مخصوص معائنہ کاروں پر پابندی اور ان پر دباؤ ڈالتا رہا ہے،۔ ان کا کہناتھا کہ معائنہ کاروں کی رپورٹ متوازن نہیں ۔

وائٹ ہاؤس کے ترجمان ٹومی وائیٹر کے مطابق یہ رپورٹ ”پریشان کن“ ہے اور اس سے ظاہر ہوتا ہے کہ ایران اب بھی جوہری ہتھیاروں کی صلاحیت حاصل کرنے کی کوششیں کررہاہے۔

جہاں ان معائنہ کاروں کو جانے کی اجازت دی گئی تھی وہاں رپورٹ کے مطابق سست روی کے ساتھ کم درجے کی یورینیم کی افزودگی جاری ہے۔

آئی اے ای اے کے مطابق ایران نے اپنے نتانز میں واقع جوہری تنصیب میں کم درجے کا 2.8ٹن افزودہ جوہری مواد تیار کرلیا ہے اور مئی سے اب تک اپنی جوہری مواد میں 15فیصد اضافہ کرلیا ہے جو کہ تقریباً دو بم بنانے کے لیے کافی ہے۔

عالمی ایجنسی کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ ایک اور افزودگی جس کے بارے میں ایران کا کہناہے کہ یہ اپنے تحقیقاتی ری ایکٹرکے ایندھن کے استعمال کے لیے ہے،تقریباً 20فیصد خالص22 کلوگرام اعلیٰ درجے کا یورینیم تیار کیا جاچکا ہے۔ اس اعلیٰ درجے کے مواد کو 90فیصد تک خالص بنانے کے بعد ہی ہتھیاروں کی تیاری میں استعمال کیا جاسکتا ہے لیکن ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ عمل نسبتاً جلدمکمل ہوسکتا ہے۔

امریکہ اور اس کے اتحادیوں کا الزام ہے کہ ایران اپنے سول جوہری پروگرام کی آڑ میں ایٹمی ہتھیار تیار کررہا ہے لیکن ایران اس کی تردید کرتا ہے۔

XS
SM
MD
LG