رسائی کے لنکس

حملےکےدفاع میں مدد، عراقی عالم کا پیروکاروں پر زور


عراق کے ایک با اثر شیعہ عالم نے جمعے کے روز عراق بھر میں اُس سلسلے وار دھماکوں کے بعد، جِن میں کم از کم 69افراد ہلاک ہوئے، اپنے پیروکارں پر زور دیا ہے کہ وہ شیعہ کمیونٹیز کا دفاع کریں۔

بیشتر ہلاکت خیز حملے شیعہ مضافاتی علاقوں اور بغداد کے صدر سٹی کی مساجد میں ہوئے۔صدر سٹی میں عالم مقتدٰی الصدر کی زیرِ قیادت رمریکہ مخالف تحریک جاری ہے۔

الصدر نے جمعے کے روز بیان جاری کرکے اپنے پیروکاروں سے مطالبہ کیا کہ وہ اپنی عبادتگاہوں، گھروں اور کمیونٹیز کے دفاع کے لیے پولیس فورس اور فوج میں اپنے جتھے تشکیل دیں۔ صدر نے کہا کہ وہ اپنا دفاع خود کریں اور اُنھیں امریکی فوج کا انتظار نہیں کرنا چاہیئے۔

ہفتے کو سوگ واروں نےفوت ہونے والوں کی تدفین شروع کردی اور الصدر کی تحریک نے سہ روزہ سوگ کا اعلان کیا ہے۔

حملوں کی کسی نے ذمہ داری قبول نہیں کی، لیکن عراقی عہدے داروں نے عراق میں القاعدہ پر الزام عائد کیا، جِس کی قیادت شدت پسند سنی گروپ کرتا ہے۔ یہ حملے اِس اعلان کے پانچ روز بعد شروع ہوئے جِن میں عہدے داروں نے بتایا تھا کہ گروپ کے چوٹی کے دو انتہا پسند ہلاک ہوئے ہیں۔

XS
SM
MD
LG