رسائی کے لنکس

عراقی عہدے داروں کا کہنا ہے کہ جنوبی شہربصرہ کی ایک مارکیٹ میں ہونے والےدھماکےمیں کم ازکم 14افراد ہلاک اور110زخمی ہوئے۔

عہدے داروں نے بتایا ہے کہ ہفتے کی شام ہونے والا یہ دھماکہ بصرہ کےمرکزی علاقے میں واقع اشعرمارکیٹ میں ہوا۔ دھماکے کی وجوہات کے بارے میں متضاد اطلاعات موصول ہوئی ہیں۔ کچھ عہدے داروں کا کہنا ہے کہ بجلی کا جنریٹر پھٹا تھا، جب کہ دوسروں کے مطابق یہ بم حملے کا واقعہ تھا۔

اِس سے قبل ہفتے ہی کو بغداد کے زیادہ تر سنی آبادی والے سعیدیہ نامی قصبے میں علی الصبح ہونے والی لڑائی میں مسلح افراد نے چار پولیس والوں کو ہلاک اور چھ دوسرے لوگوں کو زخمی کر دیا۔ اِس کے علاوہ کی اور لوگ بھی زخمی ہوئے۔

یہ مقابلہ اُس وقت شروع ہوا جب کار چوری ہونے کے بارے میں ایک اطلاع پر پولیس نے ایک گھر پر چھاپہ مارا۔ پولیس نے بعد میں اُس عمارت سے بموں کا ایک ذخیرہ برآمد کیا۔

تشدد کے ایک دوسرے واقعے میں مسلح افراد نے بغداد کے حریہ ضلع میں گشت کر نے والے ایک پولیس اہل کار، اور فلوجہ کے مغربی شہر کی ایک چوکی پر مامور ایک دوسرے عہدے دار کو ہلاک کردیا۔ پولیس کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ موصل کے شمالی شہر میں ہونے والے ایک خودکش حملے میں ایک پولیس والا ہلاک اور پانچ دیگر افراد زخمی ہوئے۔

عہدے داروں کا کہنا ہے کہ دوسرےمقامات پر باغیوں نے ایک پولیس والے اور کرما کے مرکزی شہر میں حکومت کی پشت پناہی میں کام کرنے والے ملیشیا لیڈر کے گھر پر بم نصب کیے، جِن سے کم از کم 10افراد زخمی ہوگئے۔

XS
SM
MD
LG