رسائی کے لنکس

عراقی فورسز اور پیش مرگہ کی موصل کی جانب پیش قدمی


کرد فورسز (فائل فوٹو)

کرد فورسز (فائل فوٹو)

اس کارروائی کا آغاز مخمور سے کیا گیا جہاں امریکہ کا ایک فوجی حال ہی میں داعش کے راکٹ حملے میں ہلاک ہوا تھا۔

کرد پیش مرگہ جنگجوؤں کی معاونت سے عراقی فورسز نے جنوب مشرقی شہر موصل میں داعش کے زیر قبضہ دیہات میں کارروائی کا آغاز کیا ہے۔

پیش مرگہ کے جنرل حسین نورالدین نے وائس آف امریکہ کو بتایا کہ امریکہ کی تربیت یافتہ پندرہویں ڈویژن کی دو بریگیڈز سے تعلق رکھنے والی فورسز جنگ میں حصہ لے رہی ہیں۔

اس کارروائی میں کئی سنی قبائل کے ارکان بھی شریک ہیں جو بعض پیش مرگہ کمانڈرز کے بقول روایتی طور پر سنی علاقوں پر قبضہ برقرار رکھنے کے لیے ضروری ہیں۔

حسین نورالدین نے کہا کہ ’’وہ اس علاقے کو خالی کرانے کی کوشش کر رہے ہیں کیونکہ یہ اہم ہے۔‘‘ اس علاقے میں موصل سے مشرق میں کرکوک جانے والی ایک شاہراہ گزرتی ہے اور دریائے دجلہ کا قیارہ پل بھی وہیں واقع ہے۔

اس کارروائی کا آغاز مخمور سے کیا گیا جہاں امریکہ کا ایک فوجی حال ہی میں داعش کے راکٹ حملے میں ہلاک ہوا تھا۔ حالیہ ہفتوں میں عراقی فورسز اس علاقے میں جمع ہو رہی تھیں کیونکہ مخمور موصل میں متوقع جنگ کا ایک اہم نقطہ آغاز ہے۔

موصل کے شمال مشرق میں موجود جنرل حسین نے کہا کہ پیش مرگہ ’’معاون کی حیثیت‘‘ سے وہاں موجود ہیں۔

اطلاعات کے مطابق اتحادی افواج بھی ان دیہاتوں میں بمباری کر رہی ہیں۔

XS
SM
MD
LG