رسائی کے لنکس

دو سال کے اندر اندر آزاد فلسطین قائم کیا جائے: چار رُکنی گروپ کا مطالبہ


مشرقِ وسطیٰ میں قیامِ امن کی کوششوں کے چار رُکنی بین الاقوامی گروپ نے اسرائیل اور فلسطینیوں سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ آزاد فلسطینی مملکت کے قیام کے لیے 24 مہینوں کے اندر اندر تصفیے پر پہنچ جائیں۔

سفارت کاروں نے جمعے کے روز ماسکو میں اپنے اجلاس کے بعددونوں فریقوں پر زور دیا ہے کہ وہ دوبارہ مذاکرات شروع کریں اور ایسا منصوبہ بنائیں جس کے ذریعے اسرائیلی قبضے کو ختم کر کے ایک قابلِ عمل فلسطینی ملک کو قائم کیا جاسکے۔

چار رُکنی گروپ نے ایک بیان جاری کیا ہے جس میں اسرائیل سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ وہ آباد کاروں کی بستیوں سے متعلق تمام سر گرمیوں کوجوں کا توں منجمد کردے۔ بیان میں مقبوضہ مشرقی یروشلم میں یہودی آباد کاروں کے لیے 1600 نئے گھروں کی تعمیر کے اسرائیلی منصوبے کی یہ کہتے ہوئے مذمّت بھی کی ہے کہ اس علاقے کو اسرائیل میں ضم کرلینے کے اقدام کو بین الاقوامی طور پر تسلیم نہیں کیا گیا ہے۔

چار رُکنی گروپ امریکہ، اقوامِ متحدہ، روس اور یوپی یونین کے سفارت کاروں پر مشتمل ہے۔

اسرائیلی وزیرِ خارجہ اوِگدَور لِبر مین نے جمعے کے روز مطالبے کے جواب میں کہا ہے کہ امن کو ایک غیر حقیقت پسندانہ ٹائم ٹیبل کے ساتھ مصنوعی طریقے سے مسلّط نہیں کیا جاسکتا۔

فلسطینی صدر محمود عباس نے چار رُکنی گروپ کے بیان کا خیر مقدم کیا ہے اور کہا ہے یہ بات نازک اہمیت کی حامل ہے کہ اسرائیل اس کے جواب میں یہودیوں کی آباد کاری کے کام کو روک دے۔

جمعے کے اجلاس میں اقوامِ متحدہ کے سیکریٹری جنرل بان گی مون، امریکہ وزیرِ خارجہ ہلری کلنٹن، یورپی یونین کی خارجہ پالیسی کے امور کی سربراہ کیتھرین ایشٹن اور گروپ کے خصوصی ایلچی سابق برطانوی وزیرِ اعظم ٹونی بلئیر نے شرکت کی۔

یہ مذاکرات ایسے وقت میں ہوئے ہیں جب اسرائیل کو مقبوضہ مشرقی یروشلم میں یہودی آباد کاروں کے لیے نئے رہائشی پروجیکٹ کے سلسلے میں کڑی نکتہ چینی کا سامنا ہے۔

اسرائیل کے اس اقدام نے فلسطینیوں کو برہم کر دیا ہے جو مشرقی یروشلم کو اپنے مستقبل کے ملک کا دارالحکومت قرار دیتے ہیں۔اس اقدام پر امریکہ بھی سٹ پٹایا ہوا ہے، جس کا کہنا ہے کہ اس اعلان کے لیے پچھلے ہفتے امریکی نائب صدر جو بائیڈن کے دورے کے موقعے پر جو وقت چُنا گیا وہ ”توہین“ آمیز ہے۔

اسرائیلی وزیرِ اعظم بنجامن نتن یاہو نے اس نتازعے پر جاری کشیدگی کو کم کرنے کے لیے جمعرات کے روز وزیر خارجہ ہلری کلنٹن کے ساتھ ٹیلی فون پر بات کی تھی۔

اسرائیل عہدے داروں نے کہا ہے کہ مسٹر نتن یاہو نے فلسطینیوں کے ساتھ امن مذاکرات کا ماحول تشکیل دینے کے لیے اعتماد پیدا کرنے والے کئى ایک اقدامات تجویز کیے۔

XS
SM
MD
LG