رسائی کے لنکس

’فوج سعودی عرب بھیجنے کا فیصلہ کر لیا ہے‘: رانا افضل

  • قمرعباس جعفری

فائل

فائل

’پاکستان نے مشرق وسطیٰ کی تازہ ترین صورتحال میں سعودی سلامتی کو یقینی بنانے کے لئے، اپنی افواج سعودی عرب بھیجنے کا فیصلہ کرلیا ہے۔ تاہم، مشاورت کے لئے، معاملے کو پارلیمنٹ کے سامنے بھی پیش کیا جائے گا‘: مسلم لیگ (ن) کے رکن قومی اسمبلی کی وی او اے سے بات چیت

مسلم لیگ (ن) سے تعلق رکھنے والے رکن قومی اسمبلی اور پارلیمانی سکریٹری برائے خزانہ، رانا افضل نے کہا ہے کہ پاکستان نے مشرق وسطیٰ کی تازہ ترین صورتحال میں سعودی سلامتی کو یقینی بنانے کے لئے، بقول اُن کے، ’اپنی افواج سعودی عرب بھیجنے کا فیصلہ کرلیا ہے‘۔

تاہم، اُن کا کہنا تھا کہ، ’مشاورت کے لئے، معاملے کو پارلیمنٹ کے سامنے بھی پیش کیا جائے گا‘۔

وائس آف امریکہ کے پروگرام ’اِن دی نیوز‘ میں بات کرتے ہوئے، رانا افضل نے بتایا کہ ’سعودی عرب سے پاکستان کے اعلیٰ ترین وفد کی واپسی کے بعد، وزیر اعظم نے طویل اجلاس منعقد کئے ہیں اور معاملات کا تمام پہلوٴں سے جائزہ لینے کے بعد، پاکستانی فوج سعودی عرب بھیجنے کا فیصلہ کر لیا گیا ہے۔۔۔۔ ہم اس مسئلے کو پارلیمنٹ کے سامنے بھی پیش کریں گے، تاکہ ان کا نقطہٴنظر بھی سامنے آئے اور یہی جمہوریت کا حسن ہے کہ کسی فیصلے میں اپوزیشن کا ان پٹ بھی لیا جائے‘۔

انھوں نے کہا کہ ’اعلیٰ ترین وفد سعودی عرب گیا تھا، جس نے برادر ملک کی سلامتی کے لئے ضروریات کا جائزہ لیا؛ اور سعودی حکام کی درخواست لے کر وطن واپس لوٹا ہے۔‘

ایک دوسرے سوال پر، رانا افضل نے فوجی عدالتوں سے موت کی سزا کا دفاع کرتے ہوئے کہا کہ دنیا کو یہ بات سمجھنی چاہئے کہ پاکستان کے معروضی حالات کیا ہیں۔انھوں نے واضح کیا کہ ’جنھیں سزاء سنائی جا رہی ہے، انھوں نے ہمارے بچے قتل کئے ہیں‘۔

انھوں نے کہا کہ ’ایمنسٹی انٹرنیشنل یا دیگر بین الااقوامی فورم ہماری مجبوری کو سمجھیں۔ ہم سزائے موت کے ان فیصلوں کے لئے معذرت خواہ نہیں ہیں، اور اپنے ملکی قانون کے مطابق، ان سزاوٴں پر عملدرآمد بھی کریں گے‘۔

تفصیلی انٹرویو سننے کے لیے، آڈیو رپورٹ پر کلک کیجئیے:


XS
SM
MD
LG