رسائی کے لنکس

کراچی: سانحہٴ آرمی اسکول کے طلبہ کو خراج عقیدت


بدھ کو پشاور دہشت گردی کے ہولناک واقعے کو ایک برس ہوگیا۔ اُن معصوم بچوں کی یاد میں کراچی میں ایک تقریب منعقد ہوئی، جس میں خصوصی دعا کے ساتھ ساتھ شمعیں روشن کی گئیں

کراچی: سانحہ پشاور آرمی پبلک اسکول پاکستان کی تاریخ کی بدترین دہشتگردی شمار ہوتی ہے، جسے ایک سال کا عرصہ گزر گیا۔ ایک برس گزرنے کے بعد جہاں ملک بھر میں اس سانحے کی یاد میں تقریبات کا اہتمام کیا گیا وہیں کراچی شہر میں بھی مختلف مقامات پر سانحہ پشاور میں ہلاک ہونےوالے اسکول کے بچوں اور اساتذہ کی یاد میں تقریب منعقد ہوئی۔

کراچی شہر میں بدھ کا سورج ڈھلتے ہی سانحہ آرمی اسکول کی یاد میں شمعیں روشن کی گئیں۔

تقریب میں نوجوانوں کی ایک بڑی تعداد نے شہید ہونے والے معصوم طلبہ و طالبات کو خراج عقیدت پیش کیا، جو اِس سانحے میں دہشتگردوں کا نشانہ بنے۔

تقریب کے دوران سانحہ پشاور کے ہلاک شدگان کے لئے خصوصی دعا کی گئی۔ بعدازاں، نوجوانوں نے شمعیں روشن کیں۔

اِس موقع پر ’وائس آف امریکہ‘ سے گفتگو میں نوجوانوں کا کہنا تھا کہ ایک سال گزر جانے کے بعد بھی ہمارے دل غم زدہ ہیں۔

تقریب میں شامل ایک نوجوان طالبہ، کہکشاں نے بتایا کہ ’ہم یہاں سانحہ پشاور آرمی پبلک اسکول میں جان قربان کرنےوالوں کی یاد میں شمعیں روشن کرنے کیلئے جمع ہوئے۔ دل اور فضا سوگوار ہے، مگر جذبہ اور ولولہ مدھم نہیں ہوا، کیونکہ دشمن نے اس قوم کو للکارہ ہے‘۔

بقول کہکشاں، ’ہمارے ننھے بچوں پر حملہ کرکے ان کو ظلم و جبر زیادتی کا نشانہ بنایا گیا۔ نوجوان آج بھی ان بچوں پر ہونےوالے حملوں کو یاد کرتے ہیں جس کے بعد بچے سہم گئے تھے، مگر جب آرمی پبلک اسکول دوبارہ کھل گیا اور دوبارہ بچوں نے ایک عزم کے ساتھ اسکول جانا شروع کیا تو وہ دشمن کے ناپاک عزائم پر ایک طمانچہ ثابت ہوا۔ انھوں نے یہ بتادیا کہ بڑا دشمن بنا پھرتا ہے جو بچوں سے ڈرتا ہے‘۔

ایک اور نوجوان طالبعلم کا کہنا تھا کہ ’پشاور اسکول پر حملہ کرنے والوں کو شاید یہ لگا کہ وہ جیت گئے۔ مگر وہ نہیں جیتے۔ اگر دشمن پڑھنے سے روکنا چاہتا ہے، تو ہم اور پڑھیں گے اور ملک کا نام روشن کریں گے‘۔

ان نوجوانوں میں شامل، یسرا کے الفاظ میں، ’بچے کسی بھی قوم کا سرمایا ہیں۔ بچوں کو ٹارگٹ کیا گیا تو یہ سازش کوئی چھوٹی نہیں ہمارے مستقبل کو بگاڑنے کی ہے، یہ وقت ہے ہمیں یکجا ہونا ہے یہاں مل کر شمعیں روشن کر رہے ہیں۔ بتا رہے ہیں کہ ان بچوں کا جانا اندھیرا نہیں بلکہ کئی دئے جلا رہا ہے۔ یہ سوال ہے ان کے لئے جو سمجھتے ہیں کہ ہم کمزور ہوگئے؟ نہیں۔ وہ بچے آج بھی ہمارے ساتھ ہیں ہر بچے کے دل میں وہ بچہ دھڑکتا ہے۔ آج کا دن یاد دلا رہا ہے۔ ہم نے بہت کچھ کھویا مگر ہم ہم پاکستان سے محبت کرتے ہیں۔ پاکستان کا ہر فرد ہماری جان ہے‘۔

نوجوانوں کا کہنا تھا کہ وہ ملک کے دشمنوں سے ڈرنے والے نہیں۔

XS
SM
MD
LG