رسائی کے لنکس

سابق پاکستانی صدر فاروق لغاری انتقال کرگئے

  • عمیر ریاض

پاکستان کے سابق صدر سردار فاروق احمد خان لغاری طویل علالت کے بعد منگل اور بدھ کی درمیانی شب انتقال کرگئے۔ ان کی عمر 70 برس تھی۔

سردار فاروق احمد خان لغاری نے 14 نومبر 1993 تا 2 دسمبر 1997 پاکستان کے آٹھویں صدر کی حیثیت سے خدمات انجام دیں۔ وہ 29 مئی 1940 کو ڈیرہ غازیخان کے گائوں چوٹی زیریں میں ایک بااثر سیاسی خاندان میں پیدا ہوئے تھے۔ ان کے والد سردار محمد خان لغاری اور دادا نواب سر محمد جمال خان لغاری تقسیمِ برِصغیر سے قبل انگریزوں کے دورِ حکومت میں وزیر بھی رہے۔

سردار فاروق لغاری نے لاہور کے ایچی سن کالج اور فار مین کرسچن کالج اور برطانیہ کی آکسفورڈ یونیورسٹی سے تعلیم حاصل کی۔ تعلیم مکمل کرنے کے بعد انہوں نے کچھ عرصہ پاکستان کی سول سروس میں خدمات انجام دیں تاہم بعد ازاں ملازمت سے استعفی دے کر اپنی تمام توجہ قبائلی معاملات اور زمینوں کی دیکھ بھال پر مرکوز کردی۔ انہیں ان کے والد کی وفات کے بعد لغاری قبیلے کا سردار بھی منتخب کیا گیا۔

فاروق لغاری نے اپنی سیاست کا آغاز پاکستان پیپلز پارٹی سے کیا اور جنرل ضیاءالحق کے دور میں قید و بند کی صعوبتیں بھی برداشت کیں۔

1993 میں پیپلز پارٹی کی حکومت کے برسرِ اقتدار آنے کے بعد انہیں ملک کا آٹھواں صدر منتخب کیا گیا۔ تاہم نومبر 1996 میں انہوں نے کرپشن کے الزامات کے تحت اپنی ہی جماعت کی حکومت کو برخواست کرتے ہوئے اسمبلیاں تحلیل کردیں۔

سردار فاروق لغاری نے دسمبر 1997 میں اس وقت کے وزیرِ اعظم میاں نواز شریف کے ساتھ تناعات کے باعث صدر کے عہدے سے استعفی دے دیا۔ بعد ازاں انہوں نے "ملت پارٹی" کے نام سے اپنی سیاسی جماعت بنائی اور 2002 کے انتخابات میں حصہ لیا۔ اور انتخابات کے بعد بننے والی حکومت کا حصہ بنے۔

بعد ازاں مئی 2004 میں انہوں نے اپنی جماعت اس وقت کی حکمران جماعت پاکستان مسلم لیگ (قائدِاعظم) میں ضم کردی۔

گزشتہ کچھ مہینوں سے فاروق لغاری اپنی علالت کے باعث پاکستان کے سیاسی منظر نامے سے غائب تھے۔

XS
SM
MD
LG