رسائی کے لنکس

لیبیا: حقوق انسانی کی معروف کارکن قتل


سلویٰ بوغائیغیث

سلویٰ بوغائیغیث

امریکی محکمہ خارجہ کی ترجمان میری ہارف کا کہنا تھا کہ امریکہ سلویٰ کے بہیمانہ قتل کی پرزور مذمت کرتا ہے

لیبیا میں انسانی حقوق کی ایک معروف کارکن کو نامعلوم مسلح افراد نے گولی مار کر ہلاک کردیا۔

پولیس حکام کے مطابق سلویٰ بوغائیغیث بدھ کو پارلیمانی انتخاب میں ووٹ ڈالنے کے بعد اپنے گھر واپس پہنچی ہی تھیں کہ انھیں فائرنگ کر کے ہلاک کر دیا گیا۔

بن غازی میں پیش آنے والے اس واقعے کے وقت سلویٰ کے میاں بھی گھر پر موجود تھے لیکن اب وہ بھی لاپتا ہیں۔

سلویٰ پیشے کے اعتبار سے وکیل تھیں اور 2011ء کی حکومت مخالف اس تحریک میں انھوں نے اہم کردار ادا کیا تھا جس کے نتیجے میں معمر قذافی کو اقتدار سے علیحدہ ہونا پڑا تھا۔

وہ ان مذہبی انتہا پسندوں پر بھی کھل کر تنقید کرتی رہی ہیں جو قذافی کے بعد سے لیبیا میں صورتحال کو خراب کرتے رہے ہیں۔

امریکی محکمہ خارجہ کی ترجمان میری ہارف کا کہنا تھا کہ امریکہ سلویٰ کے بہیمانہ قتل کی پرزور مذمت کرتا ہے۔ انھوں نے مقتولہ کو ایک باہمت خاتون اور ایک لیبیا کی ایک سچی محب وطن قرار دیا۔

لیبیا میں بدھ کو نئی پارلیمنٹ کے لیے انتخاب کا انعقاد کیا گیا تھا۔ دو سو نشستوں کے لیے 1600 امیدوار میدان میں تھے۔

XS
SM
MD
LG