رسائی کے لنکس

قذافی خاندان کو قصداً نشانہ نہیں بنایا: نیٹو


ذرائع ابلاغ کے نمائندوں کو حملے میں شدید متاثر ہونے والی عمارت کا دورہ بھی کروا یا گیا۔

ذرائع ابلاغ کے نمائندوں کو حملے میں شدید متاثر ہونے والی عمارت کا دورہ بھی کروا یا گیا۔

نیٹو نے کہا ہے کہ اس نے ہفتہ کو طرابلس پر فضائی حملے کیے لیکن ان میں لیبیا کے رہنما معمر قذافی کے بیٹے اور اس خاندان کے دیگر افراد کی ہلاکت کی تصدیق نہیں کی جاسکتی ہے۔

لیفٹیننٹ جنرل چارلز بوچرڈ کا کہنا تھا کہ اتحادی افواج نے دارالحکومت طرابلس کے علاقے باب العزیزیا میں ایک ’کمانڈ اینڈ کنٹرول‘ عمارت کو نشانہ بنایا۔ اُن کے بقول بین الاقوامی افواج شخصیات کو نشانہ نہیں بناتی ہیں۔

چالز بوچرڈ کا کہنا تھا کہ تمام جانی نقصانات، خصوصاً معصوم شہریوں کی ہلاکتیں، نیٹو کے لیے باعث افسوس ہوتی ہیں۔

سیف العرب قذافی

سیف العرب قذافی

ہفتہ کے روز لیبیا کی حکومت کے ایک ترجمان موسیٰ ابراہیم نے بتایا کہ معمر قذافی کے بیٹے کے گھر پر حملے میں 29 سالہ سیف العرب قذافی اور اُن کے تین بچے ہلاک ہو گئے۔

موسیٰ ابراہیم کے مطابق فضائی کارروائی کے وقت معمر قذافی اپنی اہلیہ کے ساتھ اس عمارت میں موجود تھے تاہم وہ محفوظ رہے۔ حملے میں متعدد افراد زخمی بھی ہوئے۔ ذرائع ابلاغ کے نمائندوں کو حملے میں شدید متاثر ہونے والی عمارت کا دورہ بھی کروا یا گیا۔

سرکاری ترجمان نے نیٹو کے اس حملے کو معمر قذافی کے قتل کی براہ راست کوشش قرار دیا۔

اس واقعے کی اطلاع ملتے ہی باغیوں کے گڑھ بن غازی میں لوگوں نے خوشی کے اظہار کے طور پر ہوائی فائرنگ کی اور گاڑیوں کے ہارن بجائے۔

ہفتہ کو نیٹو نے معمر قذافی کی طرف سے ملک میں جاری بحران حل کرنے کے لیے مذاکرات کی پیشکش کو بھی مسترد کر دیا تھا۔

XS
SM
MD
LG