رسائی کے لنکس

ملائشیا: اللہ کے نام پر تنازعہ، 11 گرجا گھروں کے بعد ایک مسجد پر حملہ


ہفتے کے شروع میں کوالالمپور میں ایک گوردوارےپر پتھرپھینکے گئے تھے

ملائشیا میں مذہبی کشیدگی کے دوران 11 گرجا گھروں اور سکھوں کے ایک گوردوارے پر حملوں کے بعد اب پولیس نے ایک مسجد کے قریب توڑ پھوڑ کی کارروائى کی اطلاع دی ہے۔

حکام نے کہا ہے نامعلوم شَر پسندوں نے جمعے کو دیر گئے ریاست سراوک کے جزیرے بورنیوکی ایک مسجد کے باہر کوئى بوتل توڑ دی۔ یہ کسی مسجد کے قریب اس قسم کی پہلی کارروائی ہے۔ یہ واضح نہیں کہ آیا بوتل میں کوئى شراب بھی تھی۔ بیشتر مسلمان شراب نوشی کو ایک گناہ خیال کرتے ہیں۔

ملائشیا میں پچھلے مہینے کئى گرجا گھروں پر آگ لگانے والے بموں سے حملے کیے گئے یا اُن پر پتھر اور دوسری چیزیں پھینکی گئیں۔اسی طرح اس ہفتے کے شروع میں کوالالمپور میں ایک گوردوارے پر پتھر پھینکے گئے تھے۔

مسلم اکثریت کے اس ملک میں مذہبی بنیادوں پر کشیدگی اُس وقت سے بڑھی ہوئى جب دسمبر کے آخر میں ملائشیا کی عدالتِ عالیہ نے حکومت کی عائد کردہ اُس پابندی کو ختم کردیا تھا، جس کے تحت غیر مسلم خدا کے لیے لفظ اللہ استعمال نہیں کرسکتے تھے۔

ملائشیا کے رومن کیتھولک اخبار ہیرلڈ نے ملک کی دوسری مذہبی اور نسلی اقلیتوں کی جانب سے حکومت کی عائد کردہ پابندی کے خلاف قانونی جنگ کی قیادت کی تھی۔ اخبار کے ایڈیٹر، ہیرلڈ کے مَلے زبان کے ایڈیشن میں لفظ اللہ استعمال کرنا چاہتے تھے اور اس کی اجازت حاصل کرنے کے لیے انہوں نے عدالت میں یہ دلیل پیش کی تھی کہ مَلے زبان میں خدا کے لیے صرف ایک ہی لفظ ہے ، اوروہ اللہ ہے۔

ملائشیا کی دو کروڑ 70 لاکھ کی آبادی میں تقریباً 60 فیصد لوگ مَلے ہیں اور وہ سب مسلمان ہیں ۔اہم مذہبی اقلیتوں میں بدھ مَت، عیسائیت اور ہندومَت کے پیرو کار شامل ہیں۔

XS
SM
MD
LG