رسائی کے لنکس

میمو گیٹ اسکینڈل پر عدالت جانا پارلیمنٹ کے خلاف سازش ہے: گیلانی


میمو گیٹ اسکینڈل پر عدالت جانا پارلیمنٹ کے خلاف سازش ہے: گیلانی

میمو گیٹ اسکینڈل پر عدالت جانا پارلیمنٹ کے خلاف سازش ہے: گیلانی

وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی نے کہا ہے کہ میمو گیٹ اسکینڈل پر سپریم کورٹ میں جانا پارلیمنٹ کےخلاف سازش کا حصہ ہے ، صدر آصف علی زرداری کی زندگی کو خطرہ تھااسی لئے انہیں ملکی اسپتال میں داخل نہیں کرایا، تمام تر دباؤکےباوجود ملکی خود مختاری کو مقدم رکھا اور پہلی مرتبہ پاک فوج کے سربراہ اور ڈی جی آئی ایس آئی کو پارلیمنٹ کے سامنے جواب دینا پڑا ۔
بدھ کو سینیٹ میں خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی نے کہا کہ میمو اسکینڈل آیا تو فوری طور پر امریکا میں سابق سفیر حسین حقانی کو طلب کیا اور شفاف تحقیقات کیلئے اُن سے استعفیٰ لیا گیا۔

اُن کا کہنا تھا کہ میمولکھنے والے کی ساکھ اور ماضی کو سامنے رکھنا چاہیئے، اور اُن کے بقول، پارلیمنٹ میں بیٹھا ایک شخص بھی منصور اعجاز کے ساتھ رابطے میں ہے جو سازش کا حصہ ہے، اُس شخص کا نام جانتا ہوں مگر بتاؤں گا نہیں ۔
وزیراعظم نے مزید کہا کہ صدر پارلیمنٹ کا حصہ ہیں، تاہم ان کی بیماری ہو یا میمو گیٹ اسکینڈل ان کے خلاف افواہیں افسوسناک ہیں ،ہمیں محب الوطنی کیلئے کسی کے سر ٹیفکیٹ کی ضرورت نہیں ۔ غدار قرار دینے کا سلسلہ جاری رہا تو ملک مزید مشکلات میں پھنسے گا ۔ وزیراعظم کے الفاظ میں: ’ ہمارا رہنا ضروری نہیں، بلکہ پارلیمنٹ او رجمہوریت رہنی چاہیئے ، آج استعفیٰ دے دوں تو کوئی بھی حکومت نہیں بنا پائے گا‘۔
اُن کا کہنا تھا کہ نیٹوحملہ ہویا ایبٹ آباد واقعہ،’ ہم نےپوری قوم کواکٹھا کیا اور پہلی مرتبہ کسی حکومت نے اتنی جراٴتمندی کا ثبوت دیا‘ ۔

اُن کے الفاظ میں: ’نیٹوحملوں کے بعد فوری طور پر دفاعی کمیٹی کا اجلاس طلب کیا ، نیٹوسپلائی بند کرنے کے علاوہ شمسی ائیر بیس خالی کرانے کے فیصلے کیے گئے ، بون کانفرنس میں سخت عالمی دباؤکے باوجود عدم شرکت کے فیصلے پر قائم رہ کر اٹھارہ کروڑ عوام کے جذبات کی ترجمانی کی اور پہلی مرتبہ کسی حکومت نے اتنی جراٴت دکھائی ہے ، نیٹو سپلائی میوزک کنسرٹ کرنے سے بند نہیں کی جا سکتی ‘۔
اُ ن کا کہنا تھا کہ وہ پارلیمنٹ کو سب سے زیادہ وقت دینے والے وزیراعظم ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ،’ وفاقی وزرا ایوانوں میں جوابدہ ہیں ، امریکا اوربھارت سے تعلقات ہو ں یا کشمیرسے متعلق پالیسی، ملک کا ہر فیصلہ پارلیمنٹ کرے گی‘ ۔

XS
SM
MD
LG