رسائی کے لنکس

توقع یہ تھی کہ اسرائیل، فلسطینی معاہدے کے کسی ’فریم ورک‘ تک پہنچ جائیں گے، مثلاً اِس حساس معاملے پر کہ مستقبل کی فلسطینی ریاست میں یروشلم کی کیا حیثیت ہوگی، اور فلسطینی پناہ گزینوں کو اپنے سابقہ گھروں کی طرف لوٹنے کا حق حاصل ہوگا کہ نہیں

امریکی وزیر خارجہ جان کیری نے یہ بات تسلیم کی ہے کہ اسرائیل فلسطینی امن معاہدے کے لیے 29 اپریل کی حتمی تاریخ تک نتائج برآمد نہ ہو پائیں۔

کیری نے یہ بات بدھ کے روز واشنگٹن میں نامہ نگاروں سے بات چیت کرتے ہوئے کہی۔ اُنھوں نے کہا کہ کسی کو فکر نہیں کہ مزید نو ماہ لگ جائیں گے، یا پھر کچھ بھی ہوتا رہے۔

اُنھوں نے اس بات کی کوئی وضاحت نہیں کی، آیا اِس وقت مذاکرات کس نہج پر ہیں۔ تاہم، اُنھوں نے کہا کہ اُنھیں اُن لوگوں پر ہنسی آتی ہے جو یہ کہہ دیتے ہیں کہ امن عمل کا کوئی نتیجہ برآمد نہیں ہوگا۔

تین برس کے تعطل کے بعد جب جولائی میں اسرائیل اور فلسطینیوں کے مابین مذاکرات بحال ہوئے، کیری نے اس امید کا اظہار کیا تھا کہ اِس سلسلے میں، اپریل کے آخر تک کوئی سمجھوتا ہوجائے گا۔

توقع یہ تھی کہ دونوں فریق معاہدے کے کسی ’فریم ورک‘ تک پہنچ جائیں گے، مثلاً اِس حساس معاملے پر کہ مستقبل کی فلسطینی ریاست میں یروشلم کی کیا حیثیت ہوگی، اور فلسطینی پناہ گزینوں کو اپنے سابقہ گھروں کی طرف لوٹنے کا حق حاصل ہوگا کہ نہیں۔
XS
SM
MD
LG