رسائی کے لنکس

ایم کیو ایم کی زخمی رکنِ اسمبلی دم توڑ گئیں


طاہرہ آصف کو بدھ کی دوپہر لاہور کے علاقے علامہ اقبال ٹاؤن میں اس وقت دو نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نے فائرنگ کا نشانہ بنایا تھا جب وہ اسلام آباد جارہی تھیں۔

لاہور میں نامعلوم افراد کی فائرنگ سے زخمی ہونے والی متحدہ قومی موومنٹ کی رکنِ قومی اسمبلی طاہرہ آصف اسپتال میں دم توڑ گئی ہیں۔

طاہرہ آصف کو بدھ کی دوپہر لاہور کے علاقے علامہ اقبال ٹاؤن میں اس وقت دو نامعلوم موٹر سائیکل سواروں نے فائرنگ کا نشانہ بنایا تھا جب وہ اسلام آباد جارہی تھیں۔

انہیں فوری طور پر لاہور کے شیخ زید اسپتال منتقل کیا گیا تھا جہاں جمعرات کی شب وہ دم توڑ گئیں۔ ڈاکٹروں کا کہنا تھا کہ انہیں نازک حالت میں اسپتال لایا گیا تھا اور ان کا خون بہت زیادہ بہہ گیا تھا۔

طاہرہ آصف 2013ء کے عام انتخابات کے بعد متحدہ قومی موومنٹ کے ٹکٹ پر سندھ سے خواتین کی مخصوص نشستوں پہ قومی اسمبلی کی رکن منتخب ہوئی تھیں۔

ابتدائی تفتیش کے بعد پولیس حکام نے دعویٰ کیا تھا کہ مسلح افراد نے طاہرہ آصف سے پرس چھیننے کی کوشش کی تھی جس میں مزاحمت پر انہیں گولیوں کا نشانہ بنایا گیا۔

لیکن ان کے اہلِ خانہ اور ایم کیو ایم کی قیادت نے پولیس کا یہ موقف مسترد کردیا تھا۔ ایم کیو ایم کے لندن میں مقیم قائد الطاف حسین نے پارٹی کی ایم این اے پر حملے کو سوچی سمجھی سازش قرار دیتے ہوئے کہا تھا کہ پولیس جان بوجھ کر قاتلانہ حملے کو ڈکیتی کا رنگ دینا چاہ رہی ہے۔

متحدہ قومی موومنٹ نے رکنِ قومی اسمبلی کے قتل پر تین روزہ سوگ کا اعلان کرتے ہوئے حکومت کو قاتلوں کی گرفتاری کے لیے تین روز کا وقت دیا ہے۔

لندن سے جاری کیے جانے والے ایک بیان میں ایم کیو ایم کے قائد الطاف حسین نے کہا ہے کہ سوگ کے دوران عوام گھروں پر سیاہ پرچم لہرائیں لیکن کاروبار اور ٹرانسپورٹ بند نہ کیا جائے۔
XS
SM
MD
LG