رسائی کے لنکس

ممبئی حملہ کیس: حافظ سعید اور ہیڈلی سمیت 9 افراد پر فردِ جرم داخل

  • سہیل انجم

ممبئی حملہ کیس: حافظ سعید اور ہیڈلی سمیت 9 افراد پر فردِ جرم داخل

ممبئی حملہ کیس: حافظ سعید اور ہیڈلی سمیت 9 افراد پر فردِ جرم داخل

اِن سب لوگوں پر بھارت کے خلاف جنگ چھیڑنے، دہشت گردانہ حملوں کی سازش کرنے اور دیگر دفعات کے تحت الزامات عائد کیے گئے ہیں

قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے) نے ممبئی پر دہشت گردانہ حملوں کے معاملے میں جماعت الدعویٰ کے سربراہ حافظ سعید اور ڈیوڈ ہیڈلی سمیت نو افراد کے خلاف ایک خصوصی عدالت میں فردِ جرم داخل کی ہے۔

جِن دوسرے لوگوں کو ملزم بنایا گیا ہے اُن میں ذکی الرحمٰن لکھوی، الیاس کشمیری، تہور حسین رانا، ساجد ملک، پاکستانی فوج کے سابق افسر عبد الرحمٰن ہاشمی اور دو موجودس افسران میجر اقبال اور میجر سمیر علی کے نام شامل ہیں۔

اِن تمام لوگوں پر بھارت کے خلاف جنگ چھیڑنے، دہشت گردانہ حملوں کی سازش کرنے اور دیگر دفعات کے تحت الزامات عائد کیے گئے ہیں۔

بھارت کا کہنا ہے کہ ڈیوڈ ہیڈلی لشکرِ طیبہ کے اور الیاس کشمیری القاعدہ کے دہشت گرد ہیں۔اُس کا یہ بھی دعویٰ ہے کہ حافظ سعید اور ذکی الرحمٰن لکھوی ممبئی حملوں کے ماسٹر مائینڈ اور منصوبہ ساز ہیں۔ ڈیوڈ ہیڈلی نے ایک امریکی عدالت میں ممبئی حملوں میں مدد کرنے کا اعتراف کیا ہے۔

جمعرات کے روز حکومت نے این آئی اے کو فردِ جرم داخل کرنے کی اجازت دی تھی۔اُس نے 12نومبر 2009ء کو ہیڈلی اور رانا کے خلاف کیس درج کیا تھا۔ دونوں اِس وقت امریکی حکام کی تحویل میں ہیں۔

این آئی اے کی خصوصی عدالت سات جنوری کو چارج شیٹ تسلیم کرنے یا نہ کرنے کے بارے میں اپنا حکم سنائے گی۔

XS
SM
MD
LG