رسائی کے لنکس

نیٹو سربراہ اجلاس شروع، اتحاد کو مزید موثر بنانے پر زور


نیٹو سربراہ اجلاس شروع، اتحاد کو مزید موثر بنانے پر زور

نیٹو سربراہ اجلاس شروع، اتحاد کو مزید موثر بنانے پر زور

نیٹو کے سیکریٹری جنرل آندریس فوگ راسموسن نے تنظیم کو مزید موثر بنانے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ نئے خطرات کے مقابلے کیلیے نیٹو اتحاد کو جدید خطوط پر استوار کرنا ضروری ہے۔

نیٹو کے سیکریٹری جنرل آندریس فوگ راسموسن نے تنظیم کو مزید موثر بنانے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ نئے خطرات کے مقابلے کیلیے نیٹو اتحاد کو جدید خطوط پر استوار کرنا ضروری ہے۔

جمعہ کے روز پرتگال کے دارالحکومت لزبن میں نیٹو کے دو روزہ سربراہی اجلاس کے افتتاحی سیشن سے خطاب میں تنظیم کے سیکریٹری کا کہنا تھا کہ اتحاد کو اکیسویں صدی میں عالمی دہشت گردی، میزائل ٹیکنالوجی کے پھیلاؤ اور سائبر سیکیورٹی جیسے خطرات کا سامنا ہے جن کے مقابلے کیلیے نیٹو کو خود کو جدید بنانا ہوگا۔

امید کی جارہی ہے کہ دو روزہ اجلاس کے دوران امریکی صدر براک اوباما ایک لاکھ تیس ہزار سے زائد اتحادی افواج کے افغانستان سے مرحلہ وار انخلاء کا امریکی منصوبہ پیش کریں گےجس پر 2012 سے 2016 کے دوران عمل درآمد کیا جائے گا۔

صدر اوباما پہلے ہی افغانستان کے سیکیورٹی کنٹرول کی عالمی افواج سے مقامی اداروں کو مرحلہ وار سپرد گی کے پلان پر اتفاقِ رائے کے حصول کیلیے "لزبن سمٹ" کو نیٹو رہنماؤں کیلیے ایک سنہری موقع قرار دے چکے ہیں۔

نیٹو سربراہی اجلاس کے دوران 28 ملکی اتحاد کیلیے مستقبل کا ایک نیا منصوبہ عمل بھی منظوری کیلیے پیش کیا جائے گا جس کے بارے میں راسموسن کا کہنا ہے کہ وہ آئندہ دہائیوں میں نیٹو کیلیے "روڈ میپ" ثابت ہوگا۔

"لزبن سمٹ" میں سرد جنگ کے دور کے حریف روس کو بھی خصوصی شرکت کی دعوت دی گئی ہے جسے تجزیہ کار یورپ میں مجوزہ میزائل دفاعی نظام کی تنصیب اور افغان جنگ جیسے امور پر نیٹو اور روس کے درمیان اشتراکِ عمل کو فروغ دینے کی مغربی کوشش کا حصہ قرار دے رہے ہیں۔

اجلاس میں شرکت کیلیے لزبن آمد کے بعد پرتگالی ہم منصب انیبال کواکو سلوا کے ہمراہ ایک پریس کانفرنس سے خطاب میں صدر اوباما نے امید ظاہر کی کہ نیٹو سربراہی اجلاس امریکہ اور یورپی یونین کےدرمیان تعلقات کو مزید مضبوط بنانے میں مددگار ثابت ہوگا۔

XS
SM
MD
LG