رسائی کے لنکس

شمالی کوریا میں کینیڈین پادری کو عمر قید بامشقت کی سزا


ہیون سو لم (فائل فوٹو)

ہیون سو لم (فائل فوٹو)

چرچ کے بقول وہ شمالی کوریا میں انسانی ہمدردی کی بنیاد پر کی جانے والی سرگرمیوں میں حصہ لینے کے لیے گئے تھے اور انھوں نے یہاں ایک شفاخانہ اور یتیم خانہ بھی بنا رکھا تھا۔

شمالی کوریا کی اعلیٰ ترین عدالت نے ریاست کے خلاف جرائم کے الزام میں ایک کینیڈین پادری کو عمر قید بامشقت کی سزا سنائی ہے۔

جنوبی کوریا میں پیدا ہونے والے 60 سالہ ہیون سو لم کینیڈا میں لائٹ کورین پریسبٹیریئن چرچ میں راہب اعلیٰ کے منصب پر فائز رہے۔

انھیں گزشتہ سال شمالی کوریا میں حراست میں لیا گیا اور ان کے چرچ کے بقول وہ اس ملک میں انسانی ہمدردی کی بنیاد پر کی جانے والی سرگرمیوں میں حصہ لینے کے لیے گئے تھے اور انھوں نے یہاں ایک شفاخانہ اور یتیم خانہ بھی بنا رکھا تھا۔

انھوں نے خود پر لگائے گئے الزامات کا جولائی میں ٹی وی پر آکر اعتراف کیا تھا۔

شمالی کوریا میں حراست کے بعد رہائی پانے والے غیرملکیوں کا کہنا ہے کہ ان لوگوں سے ایسے اعترافی بیانات دباؤ کے تحت لیے جاتے تھے۔

XS
SM
MD
LG