رسائی کے لنکس

سیلا ب زدگان کی تعداد ایک کروڑ بیس لاکھ، ساڑھے چھ لاکھ گھر تباہ


وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی نے جمعہ کی شب قوم سے اپنے خطاب میں عالمی برادری ، بیرون ملک مقیم پاکستانیوں اور ملک کے اندر مخیر حضرات سے اپیل کی کے وہ سیلاب زدگان کی مدد میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیں۔ اس موقع پر انھوں نے اُن ملکوں اور عالمی اداروں کو بھی شکریہ ادا کیا جنہوں نے متاثرین کے لیے فوری طور پرامداددینے کا اعلان کیا ہے اور ریلیف سرگرمیوں میں پاکستانی حکومت کی مدد کر رہے ہیں۔

آفات سے نمٹنے کے لیے پاکستان کے قومی ادارے این ڈی ایم اے کے سربراہ ندیم احمد نے کہا ہے کہ حالیہ سیلابوں سے صرف خیبر پختون خواہ اور پنجاب میں ایک کروڑ بیس لاکھ لوگ متاثر ہوئے ہیں جبکہ ان دونوں صوبوں میں مجموعی طور پر ایک لاکھ بتیس ہزار مربع میٹر رقبہ متاثر ہوا ہے۔

جمعہ کی شام ایک نیوز کانفرنس میں سیلاب سے ہونے والی تباہ کاریوں کی تازہ ترین تفصیلا ت بتاتے ہوئے انھوں نے کہا کہ تقریباََ ساڑھے چھ لاکھ گھروں کو نقصان پہنچا ہے اور سیلابی ریلے سے صوبہ سندھ میں جو نقصانات ہوئے ہیں یا ہونے ہیں اُس کی مکمل تفصیلات جمع کرنے کا کام ابھی جاری ہے۔

ندیم احمد کا کہنا تھا کہ حالیہ سیلابوں سے ہونے والی تباہی اکتوبر 2005 ء میں آنے والے زلزلے سے ہونے والے نقصانات سے کہیں زیادہ ہے کیونکہ اُس قدرتی آفت میں تیس ہزار مر بع کلومیٹر رقبہ اور کُل 32 ہزار لوگ متاثر ہوئے تھے ۔

این ڈی ایم کے سربراہ نے کہا کہ خیبر پختون خواہ اور پنجاب میں تباہ شدہ گھروں کی تعمیر نو کے لیے پاکستان کو دو سو دس ارب روپےسے زائد کی رقم درکار ہو گئی جبکہ بجلی، سڑکوں ا ور موصلات کے نظام کو پہنچنے والے نقصانات کا ابتدائی تخمینہ ساڑھے سات ارب روپے لگایا گیا ہے ۔

وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی نے جمعہ کی شب قوم سے اپنے خطاب میں عالمی برادری ، بیرون ملک مقیم پاکستانیوں اور ملک کے اندر مخیر حضرات سے اپیل کی کے وہ سیلاب زدگان کی مدد میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیں۔ اس موقع پر انھوں نے اُن ملکوں اور عالمی اداروں کو بھی شکریہ ادا کیا جنہوں نے متاثرین کے لیے فوری طور پرامداددینے کا اعلان کیا ہے اور ریلیف سرگرمیوں میں پاکستانی حکومت کی مدد کر رہے ہیں۔

وزیر اعظم نے اپنے خطاب میں بظاہر اس تنقید کا بھی جواب دیا جو امدادی سرگرمیوں میں سست روی اور اور اس بحران سے نمٹنے کے لیے مناسب حکمت عملی کی عدم موجوگی پر حکومت پر کی جار ہی ہے۔ اُن کا کہنا تھا کہ وہ اور ان کے وزراء برابر متاثرہ علاقوں کا دورہ کر کے وہا ں صورت حال کا مشاہدہ کرنے کے بعد آئندہ کی حکمت عملی وضع کرنے میں مصروف ہیں اور متاثرین کو ہر ممکن امداد پہنچائی جا رہی ہے۔

اقوام متحدہ کے اندازوں کے مطابق پاکستان میں حالیہ سیلابوںسے متاثر ہونے والے افراد کی تعداد چالیس لاکھ سے زیادہ ہے جن میں پندرہ لاکھ کے گھر مکمل طو ر پر تباہ ہو گئے ہیں۔

XS
SM
MD
LG