رسائی کے لنکس

پاکستان: دو بھارتی صحافیوں کے ویزوں میں توسیع نا کرنے کا فیصلہ


فائل فوٹو

فائل فوٹو

وزارت اطلاعات کی جانب سے بھارتی صحافیوں کے ویزوں کے اجرا میں توسیع نا کرنے سے متعلق کوئی وجہ نہیں بتائی گئی۔

پاکستان نے دو بھارتی صحافیوں کے ویزوں میں توسیع نا کرتے ہوئے اُنھیں ایک ہفتے میں ملک چھوڑنے کے لیے کہا ہے۔

پریس ٹرسٹ آف انڈیا (پی ٹی آئی) اور بھارتی اخبار ’دی ہندو‘ سے منسلک یہ صحافی اسلام آباد میں مقیم ہیں۔

پی ٹی آئی کے صحافی سنیش فلپ اور اخبار دی ہندو کی صحافی مینا مینن کو منگل کی شب وزارت اطلاعات کے ’ایکسٹرنل پبلیسٹی ونگ‘ سے ایک خط کے ذریعے مطلع کیا گیا ہے کہ اُن کے ویزوں میں توسیع نہیں کی جا رہی ہے۔

سنیش فلپ نے وائس آف امریکہ کو بتایا کہ ویزے میں توسیع نا کرنے کی وجہ نہیں بتائی گئی اور اُنھیں 20 مئی سے قبل ملک چھوڑنے کے لیے کہا گیا ہے۔

ان دونوں بھارتی صحافیوں کو پاکستان میں آئے ہوئے ایک سال سے بھی کم وقت ہوا ہے۔

وزارت اطلاعات کی جانب سے بھارتی صحافیوں کے ویزوں کے اجرا میں توسیع نا کرنے سے متعلق کوئی وجہ نہیں بتائی گئی اور نا ہی بھارت کی جانب سے اس بارے میں کوئی ردعمل سامنے آیا ہے۔

واضح رہے کہ پاکستان کی موجودہ حکومت بھارت سے اچھے دوستانہ تعلقات استوار کرنے کے حق میں بیانات دیتی آئی ہے اور دونوں ملک تعلقات میں بہتری کے لیے عوامی رابطے بڑھانے کی تجاویز بھی دیتے رہے ہیں۔

یہ امر بھی قابل ذکر ہے کہ صحافیوں کی بین الاقوامی تنظیمیں پاکستان کو شبعہ صحافت سے وابستہ افراد کے لیے ایک خطرناک ملک قرار دیتی آئی ہیں جہاں اس شعبے سے وابستہ افراد کو کئی طرح کے خطرات کا سامنا ہے اور 2008ء سے اب تک 34 صحافیوں کو ہلاک کیا جا چکا ہے۔

حکومت پاکستان، خاص طور پر وفاقی وزیر اطلاعات یہ کہہ چکے ہیں کہ صحافیوں کے تحفظ کے لیے ہر ممکن اقدامات کیے جا رہے ہیں اور جہاں ضروری ہوا اس ضمن میں قانون سازی بھی کی جائے گی۔
XS
SM
MD
LG