رسائی کے لنکس

بچوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے ملکی و غیر ملکی تنظیموں کی مہم

  • حسن سید

سپارک کے عہدیدار امتیاز احمد پریس کانفرنس کررہے ہیں

سپارک کے عہدیدار امتیاز احمد پریس کانفرنس کررہے ہیں

ڈاکٹر باری نے بتایا کہ ان کے ادارے نے پاکستانی حکومت کے ساتھ مل کر بچوں کی شرح اموات میں کمی کے لیے ایک پروگرام شروع کیا ہے جس کے تحت عالمی تنظیموں سے امداد اکٹھی کر کے زچگی کے دوران ماؤں کو بر وقت طبی امداد اور تربیت یافتہ دائیوں کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے گا۔

انسانی حقوق کے عالمی دن کے موقع پر پاکستان میں بچوں کے حقوق کے تحفظ کے لیے مختلف ملکی اور غیر ملکی تنظیموں نے ایک مہم شروع کی ہے جن کا خیال ہے کہ اس ضمن میں موجودہ قوانین ناکافی ہیں۔

مہم میں شامل تقریباً بیس تنظیمیں حکومت پر زور دیں گی کہ وہ بچوں کے حقوق کے بارے میں اقوام متحدہ کے اعلامیے کے دو اختیاری قوائد ناموں کی توثیق کرے جو بچوں کے جنسی استحصال ، ان کی فروخت اور مسلح تصادم میں ان کے استعمال کو روکنے سے متعلق ہیں۔

اسلام آباد میں نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے بچوں کے حقوق کے لیے کام کرنے والی تنظیم ’’سپارک‘‘ کے ایک عہدیدار اور مہم کے منتظم امتیاز احمد نے کہا کہ اختیاری قوائد ناموں کی توثیق دنیا کے 139 ممالک کر چکے ہیں اور پاکستان کی طرف سے ایسا کرنے سے ملک کے اندر بچوں کے حقوق کا بہتر طور پر تحفظ ہو سکے گا اور انہیں مختلف نوعیت کے استحصال اور تشدد سے محفوظ رکھا جا سکے گا۔

ان کا کہنا تھا کہ حکومت اور غیر سرکاری تنظیموں کے درمیان بڑھتے ہوئے اشتراک کے نتیجے میں بچوں کے حقوق کی صورت حال اگرچہ بہتر ہوتی دکھائی دے رہی ہے لیکن ابھی بھی قانون سازی سمیت بہت کچھ کرنا باقی ہے۔

’’مثال کے طور پر یہ کہ اگر کسی تعلیمی ادارے میں استاد کی مار پیٹ سے بچا زخمی ہو جاتا ہے یا اس کے جسم کا کوئی حصہ ناکارہ ہو جاتا ہے تو اسے کس طرح تحفظ فراہم کیا جائے ؟ اس سلسلے میں قانون سازی کی ضرورت ہے‘‘۔

امتیاز احمد نے کہا کہ مہم میں شامل تنظیمیں ایک ایسے کمیشن کے قیام کا مطالبہ کرتی ہیں جو بچوں کے ساتھ ہونے والی زیادتیوں کا جائزے لےکر ان کی روک تھام کے لیے سفارشات مرتب کرے اور ان کے حقوق کے تحفظ کے لیے موجود قوانین کے نفاذ کو یقینی بنائے۔

مہم میں برطانوی تنظیم ’’سیوودی چلڈرن‘‘ بھی شامل ہے جس کے سینئر عہدیدار عبدالباری نے ایک انٹرویو میں کہا کہ مہم میں بچوں کی صحت کو خاص اہمیت دی گئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ اچھی صحت اگر چہ ہر بچے کا بنیادی حق ہے لیکن پاکستان میں اس سلسلے میں صورت حال اس لحاظ سے نہایت تشویش ناک ہے کہ بچوں کی شرح اموات بہت زیادہ ہے۔’’اس وقت زندہ پیدا ہونے والے ہر ایک ہزار میں سے تقریباً پچاس بچے ہلاک ہو رہے ہیں‘‘۔

ڈاکٹر باری نے بتایا کہ ان کے ادارے نے پاکستانی حکومت کے ساتھ مل کر بچوں کی شرح اموات میں کمی کے لیے ایک پروگرام شروع کیا ہے جس کے تحت عالمی تنظیموں سے امداد اکٹھی کر کے زچگی کے دوران ماؤں کو بر وقت طبی امداد اور تربیت یافتہ دائیوں کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے گا۔

XS
SM
MD
LG