رسائی کے لنکس

ہمسایہ ممالک میں مداخلت کی پالیسی ترک کر دی: پاکستانی وزیر

  • عشرت سلیم

وزیر دفاع خواجہ آصف (فائل فوٹو)

وزیر دفاع خواجہ آصف (فائل فوٹو)

خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ پاکستان امن کی خاطر اپنے مشرقی اور مغربی ہمسایوں سے بہتر تعلقات چاہتا ہے اور اس سلسلے میں اس نے بھارت کے ساتھ مذاکرات بحال کیے ہیں اور افغانستان میں امن کے لیے کوششیں کر رہا ہے۔

پاکستان کے وزیر دفاع خواجہ آصف نے کہا ہے کہ جب تک خطے کے ہمسایہ ممالک ایک دوسرے کے ملکوں کے اندر مداخلت بند نہیں کریں گے خطے میں امن نہیں آئے گا۔

بدھ کو قومی اسمبلی میں ایک غیر معمولی بیان میں خواجہ آصف نے کہا کہ اُن کے ملک نے اپنے ہمسایہ ممالک میں مداخلت کی پالیسی کو مکمل طور پر تبدیل کر دیا ہے اور اس کے ثمرات اسے حاصل ہو رہے ہیں۔

بھارت اور افغانستان کی طرف سے پاکستان پر یہ الزام لگایا جاتا رہا ہے کہ وہ مسلح گروہوں کے ذریعے ان کے ملکوں میں مداخلت کا مرتکب رہا ہے، مگر پاکستان ان الزامات کی تردید کرتا رہا ہے۔

دوسری طرف پاکستان بھارت کی خفیہ ایجنسی ’را‘ پر پاکستان میں دہشت گردی میں ملوث ہونے کا الزام عائد کرتا رہا ہے۔

خواجہ آصف کا کہنا تھا کہ پاکستان امن کی خاطر اپنے مشرقی اور مغربی ہمسایوں سے بہتر تعلقات چاہتا ہے اور اس سلسلے میں اس نے بھارت کے ساتھ مذاکرات بحال کیے ہیں اور افغانستان میں امن کے لیے کوششیں کر رہا ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ کوششیں پاکستان کی پالیسی میں مکمل تبدیلی کا نتیجہ ہیں اور اس کے ثمرات ہمیں حاصل ہو رہے ہیں۔

’’پاکستان پچھلے تیس چالیس سال میں پہلی مرتبہ، بلکہ اپنی 68 سالہ تاریخ میں پہلی مرتبہ ایسا کردار ادا کر رہا ہے کہ جو پہلے ہم نے پراکسیز کی صورت میں کردار ادا کیا یا ہم ذریعہ بنے کسی نہ کسی مداخلت کا۔ اب پاکستان اپنے ہمسایوں کے ساتھ عدم مداخلت، امن کی، اور اس خطے میں استحکام کی بات کر رہا ہے، بلکہ اس کی قیادت کر رہا ہے۔‘‘

دسمبر میں اسلام آباد میں ہارٹ آف ایشیا کانفرنس کے موقع پاکستان اور بھارت نے دوطرفہ مذاکرات بحال کرنے کا اعلان کیا تھا جبکہ اسی ماہ بھارتی وزیراعظم نریندر مودی نے پاکستان کا مختصر دورہ بھی کیا۔

تاہم جنوری میں پاکستان کی سرحد کے قریب واقع شہر پٹھان کوٹ میں بھارتی فضائیہ کے ایک اڈے پر حملے کے بعد بھارت نے الزام عائد کیا تھا کہ اس حملے میں پاکستان میں موجود دہشت گرد تنظیم جیش محمد ملوث ہے۔

ادھر افغانستان نے بھی حالیہ مہینوں میں ہونے والے حملوں کا الزام پاکستان میں چھپے دہشت گردوں پر عائد کیا تھا۔ تاہم پاکستان نے ان پر کسی بڑے رد عمل کا اظہار کیے بغیر افغان قیادت کو اپنے مکمل تعاون کی یقین دہانی کرائی تھی۔

اس سلسلے میں دسمبر میں پاکستان نے اسلام آباد میں ہارٹ آف ایشیا کانفرنس منعقد کرائی تھی جبکہ افغانستان میں امن مذاکرات میں پیش رفت کے لیے امریکہ، افغانستان، پاکستان اور چین پر چار فریقی مذاکرات میں بھی شریک ہے۔

XS
SM
MD
LG