رسائی کے لنکس

فائربندی کی مبینہ بھارتی خلاف ورزی کے خلاف پاکستان کا اقوام متحدہ سے رابطہ


فائل فوٹو

فائل فوٹو

پاکستانی حکام کے مطابق گزشتہ دو روز میں بھارت کی جانب سے کی گئی فائرنگ کے نتیجے میں اس کے ہاں چار افراد ہلاک اور پانچ زخمی ہوئے ہیں۔

پاکستان کی فوج نے متنازع علاقے کشمیر کو منقسم کرنے والی عارضی حد بندی پر بھارتی فورسز کی طرف سے فائربندی کی مبینہ خلاف ورزی پر اقوام متحدہ کے فوجی مبصر مشن سے اپنا احتجاج ریکارڈ کروایا ہے۔

جمعہ کو پاکستانی فوج کے شعبہ تعلقات عامہ کی طرف سے ایک مختصر بیان میں بتایا گیا کہ اقوام متحدہ کے فوجی مبصر مشن سے مطالبہ کیا گیا کہ وہ بھارتی فورسز کی بلااشتعال فائرنگ کے خلاف مناسب کارروائی کرے۔

پاکستانی حکام کے مطابق گزشتہ دو روز میں بھارت کی جانب سے کی گئی فائرنگ کے نتیجے میں اس کے ہاں چار افراد ہلاک اور پانچ زخمی ہوئے ہیں۔

ایسا ہی ایک دعویٰ بھارت کی طرف سے بھی جمعرات کو سامنے آیا تھا جس میں کہا گیا کہ لائن آف کنٹرول پر بدھ کو پاکستانی فورسز کی فائرنگ سے ایک شخص ہلاک اور دو زخمی ہوئے جب کہ جمعرات کو ایسی ہی ایک خلاف ورزی میں اس کے زیر انتظام کشمیر میں تین افراد زخمی ہو گئے تھے۔

دونوں ہمسایہ ایٹمی قوتوں کے درمیان کشمیر کا علاقہ روز اول ہی سے متنازع چلا آ رہا ہے اور اس علاقے کو دو حصوں میں تقسیم کرنے والی عارضی سرحد پر فائرنگ کے واقعات بھی تواتر سے ہوتے رہتے ہیں۔

بدھ کو ہی پاکستانی حکام نے دعویٰ کیا تھا کہ اپنے زیر انتظام کشمیر میں فوجیوں نے بھارت کے ایک ڈرون طیارے کو مار گرایا تھا جو کہ فضا سے زمین کی تصاویر لیتے ہوئے ان کی حدود میں داخل ہو گیا تھا۔

اپنے اس دعوے کو تقویت بخشنے کے لیے پاکستانی فوج نے تباہ کیے گئے ڈرون کی تصویر بھی جاری کی تھی۔

اس واقعے پر اسلام آباد میں تعینات بھارتی ہائی کمشنر کو دفتر خارجہ طلب کر کے احتجاج بھی ریکارڈ کروایا گیا۔

یہ سب کچھ ایک ایسے وقت ہو رہا ہے جب گزشتہ ہفتے ہی پاکستان اور بھارت کے وزرائے اعظم کے درمیان روس کے شہر اوفا میں باضابطہ ملاقات ہوئی تھی جس میں دونوں رہنماؤں نے سرحد پر کشیدگی کو کم کرنے سے متعلق اقدام پر اتفاق کیا تھا۔

XS
SM
MD
LG