رسائی کے لنکس

پاکستان پیپلز پارٹی کی مخلوط حکومت میں شامل مسلم لیگ (ق) کی سابق رکن قومی اسمبلی ماروی میمن حزب اختلاف کی سب سے بڑی جماعت مسلم لیگ (ن) میں شامل ہوگئی ہیں۔

آُنھوں نے اس فیصلے کا اعلان اپوزیشن جماعت کے سربراہ نواز شریف کے ہمراہ اتوار کو لاہور میں ایک نیوز کانفرنس میں کیا۔

ماوری میمن کا کہنا تھا کہ اسٹبلشمنٹ کی پالیسیوں پر چلنے والی جماعت کا رکن رہتے ہوئے صحیح معنوں میں عوام کی خدمت نہیں کی جا سکتی۔

’’2012ء میں پاکستان کو ایک ایسی قیادت کی ضرورت ہے جس میں چند بنیادی چیزیں ہوں ... جمہوریت کا قیام، عدلیہ کی آزادی اور قانون کی بالادستی، اور یہ تین چیزیں مسلم لیگ(ن) کے پاس یقیناً تھیں۔‘‘

اُنھوں نے کہا کہ ملک کی افواج کو پارلیمان کے طابع ہونا چاہیئے اور اُن کے بقول مسلم لیگ (ن) کو اس بات کا ادراک ہو چکا ہے۔

’’جو بہتر طرز حکمرانی میں نے صوبہ پنجاب میں دیکھی کاش کے ہمارے دوسرے صوبوں میں بھی ایسی ہی ہوتی۔‘‘

ماروی میمن نے کہا کہ موجودہ حالات ہمسایہ ممالک کے ساتھ پُرامن روابط جب کہ دیگر عالمی قوتوں کے ساتھ باہمی احترام کی بنیاد پر تعلقات کے متقاضی ہیں۔

نواز شریف نے ماروی میمن کو مسلم لیگ (ن) کا حصہ بننے پر مبارک باد پیش کرتے ہوئے کہا کہ ’’ماروی کا ذہن اور ہماری پارٹی کا منشور اورسوچ بالکل ایک ہے۔‘‘

اُنھوں نے کہا کہ ملک کی سیاست کو ایسی ہی ’’انقلابی سوچ‘‘ رکنے والی شخصیات کی ضرورت ہے۔

گزشتہ سال مئی میں پی پی پی کی زیر قیادت مرکز میں مخلوط حکومت میں شامل ہونے کے اپنی سیاسی جماعت کے فیصلے پر احتجاج کرتے ہوئے ماروی میمن پارلیمان اور مسلم لیگ (ق) کی رکنیت سے مستعفی ہوگئی تھیں۔

تبصرے دکھائیں

XS
SM
MD
LG