رسائی کے لنکس

پاکستان میں اقلیتوں کی نشستیں بڑھانے کے لئے بل پیش

  • کراچی

قومی اسمبلی

قومی اسمبلی

بل کے تحت قومی اسمبلی میں اقلیتوں کی چار نشستیں بڑھائی جا رہی ہیں جس کے بعد یہاں ان کی تعداد 10 سے بڑھ کر 14ہو جائے گی

پاکستان میں اقلیتوں کی نشستیں بڑھانے کیلئے قومی اسمبلی میں 23 ویں آ ئینی ترمیم کا بل 2012ء پیش کر دیا گیا۔ بل کی منظوری کی صورت میں اقلیتوں کیلئے قومی اسمبلی کے ساتھ ساتھ چاروں صوبائی اسمبلیوں میں مجموعی طور پر گیارہ نشستیں بڑھ جائیں گی۔

رواں ماہ کی 12تاریخ کو وفاقی کابینہ نے اتفاقِ رائے سے نشستوں میں اضافے کی منظوری دی تھی۔پیرکو ڈپٹی اسپیکر فیصل کریم کنڈی کی صدارت میں ہونےوالےقومی اسمبلی کے اجلاس میں وفاقی وزیر قانون فاروق ایچ نائیک نے نشستیں بڑھانے سے متعلق ترمیمی بل پیش کیا۔

بل کے تحت قومی اسمبلی میں اقلیتوں کی چار نشستیں بڑھائی جا رہی ہیں جِس کے بعد یہاں اُن کی تعداد 10 سے بڑھ کر 14 ہو جائے گی۔پنجاب اسمبلی میں اقلیتوں کی دو نشستیں بڑھ جانے سےتعداد 10 ہو جائے گی۔سندھ میں تین نشستیں بڑھائی جائیں گی جس کے بعد یہاں تعداد9 سے 12 ہو جائے گی۔خیبر پختونخوا اور بلوچستان میں اقلیتوں کی ایک ، ایک نشست بڑھ جائے گی جس کے بعد یہاں مجموعی تعداد چار ہو جائے گی۔

وزیر اطلاعات قمر الزمان کائرہ کے مطابق اقلیتوں کے حقوق پیپلزپارٹی کے منشور میں شامل ہیں۔ حکمران جماعت کی کوشش ہے کہ اقلیتوں کیلئے نشستیں بڑھانے سے متعلق بل 16 مارچ سے پہلے منظور کرا لیا جائے، تاکہ آئندہ انتخابات میں اقلیتوں کو وسیع نمائندگی مل سکے۔واضح رہے کہ 16مارچ کو موجودہ حکومت کی آئینی مدت پوری ہوجائے گی۔

وزیر مملکت اکرم مسیح گِل کہتے ہیں کہ ایوانوں میں نمائندگی بڑھانے کا اقلیتوں کا مطالبہ دیرینہ ہے۔1985ءسے اقلیتوں کی نشستیں نہیں بڑھائی گئیں جبکہ اس کے بعد سے اقلیتوں کی تعدادکہیں زیادہ ہو چکی ہے۔ لہذا، اِس عمل سے اقلیتوں کے مسائل میں کمی ہو سکے گی۔ یاد رہے کہ موجودہ حکومت اقلیتوں کی سینیٹ میں پہلے ہی چار نشستیں بڑھا چکی ہے۔

پاکستان میں گزشتہ کچھ عرصے سے ایسے واقعات تواتر سے ہو رہے ہیں جِن سے یہ تاثر عام ہو رہا ہے کہ ملک میں اقلیتی برادری عدم تحفظ کا شکار ہو رہی ہے۔ خاص طور پر اندرونِ سندھ میں آ ئے روز ہندو برادری کے اغوا ، بھتہ خوری اور ہندوخواتین کے ساتھ زیادتیاں سامنے آتی رہتی ہیں جِس کے باعث رواں سال اگست میں جب ہندو برادری بھارت میں اپنا مذہبی تہوار منانے گئی تو یہ تاثر سامنے آیا کہ وہ عدم تحفظ کی بنیاد پر ملک چھوڑ کر جا رہی ہے۔

وفاقی وزیر داخلہ رحمن ملک کے حالیہ دورہ بھارت میں بھی بھارتی حکام نے اس مسئلے پر ان سے بات چیت کی تھی جِس کے بعد اتوار کو پاکستان آنے پر انہوں نے میڈیا کو بتایا تھا کہ اِس حوالے سے بھارتی تحفظات دور کیے جائیں گے۔

غیر جانبدار مبصرین کے مطابق اِس تمام تر صورتحال میں اگر ایوانِ زیریں سے اقلیتوں کی نشستوں سے متعلق بل پاس ہو جاتا ہے تو اقلیتوں سے متعلق دنیا میں پائے جانے والے منفی تاثر کو تبدیل کرنے میں مدد ملے گی۔
XS
SM
MD
LG