رسائی کے لنکس

پروویڈنس اسٹیڈیم گایانا میں کھیلے جانے والے اس میچ میں ویسٹ انڈیز نے ٹاس جیت کر فیلڈنگ کا فیصلہ کیا۔ لیکن، کامران اکمل اور احمد شہزاد کی عمدہ بیٹنگ کی بدولت میزبان ٹیم کو ٹاس کا فائدہ نہ ہو سکا

پہلے ایک روزہ انٹرنیشنل میچ میں بیٹسمینوں کی شاندار کارکردگی کے باعث پاکستان نے ویسٹ انڈیز کو میچ جیتنے کیلئے309 رنز کا ہدف دیا ہے جو اس گراؤنڈ پر کسی بھی ٹیم کا سب سے زیادہ اسکور ہے۔ اس سے قبل سری لنکا نے 2007 کے ورلڈ کپ میں 303 ر نز بنائے تھے۔

پروویڈنس اسٹیڈیم گایانا میں کھیلے جا نے والے اس میچ میں ویسٹ انڈیز نے ٹاس جیت کر فیلڈنگ کا فیصلہ کیا لیکن کامران اکمل اور احمد شہزاد کی عمدہ بیٹنگ کی بدولت میزبان ٹیم کو ٹاس کا فائدہ نہ ہوسکا۔

دونوں بیٹسمینوں نے اوپننگ وکٹ کی شراکت میں 85 رنز کیے۔اس موقع پر کامران اکمل 47رنز کی شاندار اننگز کھیل کر احمد شہزاد کا ساتھ چھوڑ گئے۔

احمد شہزاد نے محمد حفیظ کے ساتھ مل کر رنز بنانے کا سلسلہ جاری رکھا اور دوسری وکٹ کیلئے دونوں کھلاڑیوں نے 64رنز بناکر مجموعی اسکور 149تک پہنچا دیا۔ وکٹ کے درمیان دوڑتے ہوئے مس انڈراسٹینڈنگ کے باعث احمد شہزاد 67کے انفرادی اسکور پر رن آؤٹ ہوگئے۔

احمد شہزاد کے آؤٹ ہونے کے بعد حفیظ اور بابر اعظم نے مل کر اننگز کو آگے بڑھایا۔ اس دوران رنز بنانے کی رفتار بھی سست پڑگئی۔ بابر اعظم 21گیندوں پر صرف 13 رنز بناکر نرس کی گیند پر جوزف کے ہاتھوں کیچ آؤٹ ہوگئے۔

بابر اعظم کے آؤٹ ہونے کے بعد شعیب ملک وکٹ پر آئے اور تیز رفتار بیٹنگ کرتے ہوئےاسکور میں تیزی سے اضافہ کیا۔

محمد حفیظ تیزی سے اسکور کرنے کی کوشش میں 88 رنز بناکر بناکر پویلین لوٹ گئے۔ ان کی وکٹ بھی نرس کے حصے میں آئی۔ شعیب ملک صرف 38 گیندوں پر2 چوکوں اور 6 چوکوں کی مدد سے 53رنز کی دھواں دار اننگز کھیل کر آؤٹ ہوئے۔

یوں پاکستان نے مقررہ 50اوورز میں 5وکٹوں کے نقصان پر 308رنز بنا لئے۔ سرفراز 20 اور عماد وسیم 6رنز کے ساتھ ناٹ آؤٹ رہے۔

ویسٹ انڈیز کی طرف سے ایشلے نرس نے 4اور جیسن ہولڈر نے ایک وکٹ حاصل کی۔

فیس بک فورم

XS
SM
MD
LG