رسائی کے لنکس

پاکستان میں دو اور سینئر طالبان کمانڈرگرفتار


جمعرات کو اس سے پہلے افغان انٹیلی جینس کے عہدے داروں نے پاکستانی حکام سے درخواست کی تھی کہ وہ ملّا برادر کو افغانستان کے حوالے کردیں

افغان عہدے داروں نے کہا ہے کہ پاکستان میں طالبان کے دو اورایسے سینئر کمانڈروں کو گرفتار کرلیا گیا ہے جو شمالی افغانستان میں خود ساختہ گورنروں کی طرح کام کررہے تھے۔

اسی دوران پاکستانی عہدے داروں نے کہا ہے کہ کراچی میں القاعدہ سے وابستہ کم سے کم تین جنگجوؤں کو حراست میں لیا گیا ہے۔


گرفتاریوں کی ان اطلاعات سے چند ہی روز پہلے امریکی اور پاکستانی عہدے داروں نے انکشاف کیا تھا کہ وہ طالبان کے اُس چوٹی کے کمانڈر سے پوچھ گچھ کررہے ہیں ، جسے ایک ہفتے پہلے کراچی میں گرفتار کیا گیا تھا۔ عہدے داروں نے یہ نہیں بتایا آیا عبد الغنی عرف ملّا برادر سے حاصل ہونے والی اطلاعات کے نتیجے میں باقی گرفتایاں عمل میں آئى ہیں۔


افغان عہدے داروں نے کہا ہے کہ طالبان کے جن ” خود ساختہ گورنروں “ کو پکڑا گیا ہے، وہ شمالی افغانستان کے صوبوں قُندوز اور بغلان میں باغیوں کے سیاسی اور فوجی لیڈروں کے طور پر کام کررہے تھے۔


امریکہ کے زیرِ قیادت آٹھ سال پہلے شروع ہونےوالی افغانستان کی جنگ میں طالبان جنگجوؤں کے سینئر لیڈروں کی یہ حالیہ گرفتاریاں سب اہم گرفتاریاں ہیں۔


امریکی عہدے داروں نے کہا ہے ایسی علامتیں بھی دکھائى دی ہیں کہ پاکستانی فوج اور وہ انٹیلی جینس سروسیں، جن کے ایک طویل عرصے تک طالبان کے ساتھ رابطے رہے ہیں، ہوسکتا ہے کہ اب جنگجوؤں کے خلاف زیادہ مضبوط عزم کے ساتھ کارروائیاں کررہی ہوں۔

ملّا برادر، جو ایک افغان شہری ہے ، طالبان کی صفوں میں تحریک کے بانی ملًا محمد عمر کے بعد دوسرے نمبر پر ایک اہم عہدے دار ہے۔


جمعرات کو اس سے پہلے افغان انٹیلی جینس کے عہدے داروں نے پاکستانی حکام سے درخواست کی تھی کہ وہ ملّا برادر کو افغانستان کے حوالے کردیں۔

XS
SM
MD
LG