رسائی کے لنکس

تحقیق کے مصنفین ڈیوڈ آر سیمسن اور پروفیسر چارلس ایل نن نے کہا کہ نئے اور موجودہ شواہد کی بنیاد پر ہم یہ جان پائے ہیں کہ بندروں کی مختلف اقسام کے مقابلے میں انسان اپنی نیند کے پیٹرن میں زیادہ موثر ہیں۔

رات کی نیند کسے پیاری نہیں ہوتی ہے اور اس میں تعجب کی بات نہیں ہے کہ انسانوں کی طرح جانوروں کو بھی نیند عزیز ہوتی ہے لیکن آپ کو یہ جان کر شاید حیرانی ہو کہ آپ کی پالتو بلی جو رات دن سوتی ہے اور اس کے باوجود سست اور کاہل ہے اس کے مقابلے میں آپ کی رات کی نیند زیادہ فائدہ مند ہے اور یہ امریکی سائنس دانوں کی نئی تحقیق کا نتیجہ کہتا ہے۔

ماہرین ارتقائی حیاتیات کے مطابق پچھلی چار دہائیوں کے دوران سائنسدانوں نے انسانوں میں نیند کے پیٹرن کے ارتقاء کو سمجھنے میں کافی پیش رفت کی ہے، جس کے نتیجے میں نوع انسانی میں نیند کی تفصیلات ابھر کر سامنے آئی ہیں۔

امریکی ریاست شمالی کیرولینا کی معروف ڈیوک یونیورسٹی سے تعلق رکھنے والے محقیقین ڈیوڈ آر سیمسن اور پروفیسر چارلس ایل نن نے کہا کہ نئے اور موجودہ شواہد کی بنیاد پر ہم یہ جان پائے ہیں کہ بندروں کی مختلف قسموں کے مقابلے میں انسان اپنی نیند کے پیٹرن میں زیادہ موثر ہیں۔

سائنسی جریدے 'ایوولوشنری اینتھروپولوجی' کی دسمبر کی اشاعت میں شائع ہونے والی تحقیق کے لیے ڈیوک یونیورسٹی کے محققین نے بندروں کی بیس نسلوں اور سینکڑوں ممالیہ جانوروں اور انسانوں میں نیند کے نمونوں کا جائزہ لیا ہے۔

تحقیق کے سربراہ محقق ڈیوڈ سیمسن کے مطابق انسان ہر رات تقریباً سات گھنٹوں کی نیند لیتا ہے۔ جو دوسرے جانوروں مثلاً چوہے کی نیند کے مقابلے میں آدھی سے کم ہے جبکہ بندروں کی مختلف قسموں میں نیند کا دورانیہ زیادہ سے زیادہ 17 گھنٹوں کا ہوتا ہے۔

تحقیق کے مصنفین کو پتا چلا کہ انسان اپنے قریبی رشتے دار سمجھے جانے والے بن مانس، چیمپینزی اور بندروں کی دیگر نسلوں کے مقابلے میں کم سوتا ہے۔ اس کی نیند مختصر ہے لیکن وہ دوسرے جانوروں کے مقابلے میں زیادہ گہری نیند لیتا ہے اور ’ریم سلیپ‘ میں زیادہ دیر تک سوتا ہے۔

نتائج سے ظاہر ہوا کہ جب انسان مکمل طور پر سو جاتا ہے تو ریم سلیپ کا مرحلہ شروع ہوتا ہے اور انسان 25 فیصد نیند اسی مرحلے میں پوری کرتا ہے۔

نیند کے اس مرحلے کو خواب کے ساتھ منسلک کیا جاتا ہے جب انسان کے دماغ میں سرگرمی بڑھ جاتی ہے۔ محققین کے مطابق اگرچہ دوسرے جانوروں کو بھی نیند آتی ہے لیکن جانوروں کی نیند میں ریم سلیپ کا دورانیہ اندازاً 5 فیصد ہے۔

ارتقائی بشریات سے منسلک محققین نے اندازہ لگایا کہ دیگر جانداروں کی نسلوں کے مقابلے میں انسان دن بھر جاگنے کے باوجود زیادہ سرگرم رہتا ہے کیونکہ ہماری نیند کا بڑا حصہ ریم سلیپ میں گزرتا ہے۔

محققین نے کہا کہ یہاں ہم نے نیند کی شدت اور انسان کی علمی قابلیت کے ارتقاء کا مفروضہ پیش کیا ہے جس کے مطابق ابتدائی انسانوں کو کم وقت میں نیند کی ضرورت کو پورا کرنے کے لیے دباؤ کا سامنا کرنا پڑا ہو گا اور جب وہ درختوں پر سے زمین میں رہنے لگے تو نیند کی تبدیلی ان کے لیے فائدہ مند ثابت ہوئی۔

جس کا مطلب یہ تھا کہ زیادہ گھنٹے جاگنے کی وجہ سے ان کے لیے خونخوار جانوروں یا حریف قبائل کے حملوں کا خطرہ کم تھا اسی طرح ان کے پاس سماجی رابطوں سے پیدا ہونے والے فوائد حاصل کرنے کے لیے زیادہ وقت تھا۔

محققین کے مفروضہ کے مطابق کم نیند نے انھیں زیادہ طویل وقت کے لیے کارآمد بنا دیا تھا جس میں وہ نئی مہارتیں اور معلومات سیکھتے اور رات کی گہری نیند ان یاداشتوں کو مضبوط بنانے کے لیے ضروری تھی جس کے نتیجے میں انسان کی علمی صلاحیتوں میں اضافہ ہوا۔

اس دلیل کے ساتھ یہ کہا جا سکتا ہے کہ کم سونے والے ابتدائی انسانوں کی نسلیں اپنی بقا کی جنگ لڑنے میں کامیاب رہیں، جنھوں نے ماحول سے حیاتیاتی ارتقاء کا عمل قبول کیا اور انہی میں آج کے انسان کے اجداد بھی ہیں جنھوں نے انتہائی تیز رفتاری سے اپنے آپ کو ترقی دی اور نیند کا یہ پیٹرن ان میں نسل در نسل منتقل ہوا۔

XS
SM
MD
LG