رسائی کے لنکس

فلی پینز: الیکشن سے پہلے آتشیں اسلحہ پر پابندی


ہتھیاروں پر یہ پابندی 10 مئى کوہونے والے قومی اور بلدیاتی انتخابات سے چھ ماہ پہلے عائد کی جارہی ہے

فلی پینز میں انتخابات کے سلسلے میں آتشیں اسلحہ پر ایک ملک گیر پابندی پر عمل کرانے کے لیے پولیس کے 50 ہزار اہل کاروں کو تعینات کیا جارہا ہے۔یہ پابندی اتوار کے روز نافذ العمل ہوجائے گی۔

قومی پولیس کے سربراہ جِیسَس ورزوسا نے ہفتےکے روز ِمنداناؤ جزیرے کے شہر زامبو آنگا کے ایک دورے میں یہ اعلان کیا ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ پولیس کو ملک کے طول و عرض میں جانچ پڑتال کی 35 ہزار سے زیادہ چوکیوں پر تعینات کیا جائے گا۔

ہتھیاروں پر یہ پابندی 10 مئى کوہونے والے قومی اور بلدیاتی انتخابات سے چھ ماہ پہلے عائد کی جارہی ہے۔

فلی پینز کے انسانی حقوق کے کمیشن نے حکام کو خبردار کیا ہے کہ وہ چھ مہینوں تک ہتھیاروں پر عائد پابندی پر عمل کرانے کے ساتھ ساتھ موٹر گاڑی چلانے والوں کے انسانی حقوق کا بھی احترام کریں۔

جانچ پڑتال کی چوکیوں کا مقصد انتخابات سے متعلق تشدّد کے اُن واقعات کی روک تھام کرنا ہے، جو فلی پینز میں بہت عام ہیں۔ ملک میں کئى با اثر قبائل نے خود اپنی مسلح ملیشیا تنظیمیں قائم کی ہوئى ہیں۔

ایسے ہی ایک طاقتور قبیلے امپا توان کے ایک رُکن پر الزام ہے کہ اُس نے نومبر میں اپنے ایک سیاسی حریف کے حامیوں پر اُس وحشیانہ حملے کا منصوبہ بنایا تھا، جس میں 57 لوگ ہلاک ہوئے تھے۔

XS
SM
MD
LG