رسائی کے لنکس

ریفرنڈم کے لیے اہل ووٹروں کی تعداد 42 لاکھ سے زائد ہے اور توقع کی جا رہی ہے کہ لوگوں کی ایک بڑی تعداد اس عمل میں حصہ لے گی۔

برطانیہ سے علیحدگی یا اس کا حصہ رہنے کے بارے میں اسکاٹ لینڈ میں جعرات کو ریفرنڈم کا عمل شروع ہوا۔

رائے دہندگان کے لیے تقریباً 2600 پولنگ اسٹیشن قائم کیے گئے ہیں جہاں مقامی وقت کے مطابق صبح سات بجے ووٹنگ کا عمل شروع ہوا جو کہ رات دس بجے تک جاری رہے گا۔

ریفرنڈم کے لیے اہل ووٹروں کی تعداد 42 لاکھ سے زائد ہے اور توقع کی جا رہی ہے کہ لوگوں کی ایک بڑی تعداد اس عمل میں حصہ لے گی۔

ریفرنڈم میں لوگوں سے پوچھا گیا ہے کہ " کیا اسکاٹ لینڈ کو ایک آزاد ملک ہونا چاہیے؟" اور وہ ہاں یا نہیں کا انتخاب کر سکتے ہیں۔

فرسٹ منسٹر الیکس سالمنڈ اسکاٹ لینڈ کی آزادی کی مہم کے سرکردہ رہنما رہے ہیں انھوں نے شمال مشرقی اسکاٹ لینڈ اپنا حق رائے دہی استعمال کیا۔

اسکاٹ لینڈ کا 1707 میں برطانیہ کے ساتھ الحاق ہوا تھا۔

علیحدگی کی مخالفت کرنے والے سابق وزیراعظم گورڈن براؤن نے اسکاٹ لینڈ والوں کو برطانیہ کا حصہ بنے رہنے پر زور دیا جب کہ موجودہ وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون یہ کہہ چکے ہیں کہ برطانیہ کے ساتھ رہنے کی صورت میں اسکاٹ لینڈ کے لیے کئی سود مند اقدامات کیے جائیں گے۔

پولنگ مکمل ہونے کے بعد ووٹوں کی گنتی کے لیے بیلٹ بکس 32 مختلف علاقائی سنٹرز پہنچائیں جائیں گے اور توقع ہے کہ نتائج جمعہ کی صبح تک سامنے آجائیں گے۔

ریفرنڈم سے پہلے سامنے آنے والے جائزوں کے مطابق ہاں اور نہیں کے درمیان فرق بہت ہی کم ہے اور اسی بنا پر کسی بھی طرح کی پیش گوئی کرنے میں مبصرین انتہائی محتاط نظر آئے۔

XS
SM
MD
LG