رسائی کے لنکس

اسرائیل ’فریڈم فوٹیلا‘ کے متاثرین کو دو کروڑ ڈالر ادا کرے گا: رپورٹ


ایک اسرائیلی اخبار کے مطابق، اس سلسلے میں باقاعدہ مذاکرات کا آغاز گذشتہ برس اس وقت ہوا جب اسرائیل کی جانب سے ترکی سے باضابطہ طور پر معذرت طلب کی گئی

اسرائیلی اخبار میں شائع ہونے والی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اسرائیل کی جانب سے ’فریڈم فلوٹیلا‘ پر حملے میں ہلاک ہونے والوں کے لواحقین کو دو کروڑ ڈالر ادا کیے جائیں گے۔

اسرائیلی اخبار ’ہاریٹز‘ میں شائع ہونے والی ایک رپورٹ کے مطابق، ان مغربی سفارتکاروں نے جنہیں مذاکرات کے بارے میں آگاہ کیا گیا تھا، پیر کے روز بتایا کہ ترکی کی جانب سے ابھی تک اسرائیلی پیشکش پر کوئی جواب موصول نہیں ہوا۔

اسرائیل اور ترکی کے درمیان تعلقات اس وقت سے کشیدگی کا شکار ہوگئے جب 2010ء میں غزہ کی طرف جانے والے تُرکی کے امدادی بحری بیڑے پر اسرائیلی فورسز کی جانب سے کیے گئے حملے کے نتیجے میں فلسطینیوں کے حامی نو سرگرم کارکن ہلاک ہوئے تھے۔ ان میں سے آٹھ ترک شہری اور ایک ترک نژاد امریکی شہری تھا۔

اس واقعے کے بعد ترکی نے اسرائیل سے باضابطہ معافی اور ہلاک ہونے والوں کے لواحقین کے لیے تلافی کا مطالبہ کیا تھا۔

اس سلسلے میں باقاعدہ مذاکرات کا آغاز گذشتہ برس اس وقت ہوا جب اسرائیل کی جانب سے ترکی سے باضابطہ طور پر معذرت طلب کی گئی۔

اسرائیلی اخبار کا کہنا ہے کہ دونوں فریق کے درمیان تعلقات کئی ماہ تک تعطل کا شکار رہے مگر پھر گذشتہ دسمبر میں یہ مذاکرات اس وقت دوبارہ بحال ہوئے جب اسرائیلی مذاکرات کار ترکی گئے اور ترکی نے تلافی کی رقم میں کمی پر آمادگی کا اظہار کیا۔

اخبار کے مطابق، ترکی نے تلافی کے طور پر3 کروڑ ڈالر کا تقاضا کیا تھا، جبکہ اسرائیل کی جانب سے ایک کروڑ 50 لاکھ ڈالر کی ادائیگی کی پیشکش کی گئی تھی۔
XS
SM
MD
LG