رسائی کے لنکس

عسکریت پسندوں کی محفوظ پناہ گاہیں افغانستان اور پاکستان کے لیے خطرہ


عسکریت پسندوں کی محفوظ پناہ گاہیں افغانستان اور پاکستان کے لیے خطرہ

عسکریت پسندوں کی محفوظ پناہ گاہیں افغانستان اور پاکستان کے لیے خطرہ

امریکی وزیر دفاع رابرٹ گیٹس نے متنبہ کیا ہے کہ افغانستان اور پاکستان کو تقسیم کرنے والے سرحدی علاقوں میں طالبان کی محفوظ پناہ گاہوں سے نمٹنا ناگزیر ہے ورنہ دونوں ملکوں کو شدت پسندوں کے مزید تباہ کن حملوں کا سامنا کرنا پڑے گا۔

پاکستان کا دورہ شروع کرنے سے پہلے مقامی انگریزی اخبار دی نیوز میں جمعرات کو شائع ہونے والے اپنے مضمون میں گیٹس نے انتہا پسندی کے خلاف کوششوں میں امریکی تعاون جاری رکھنے کے عزم کا اعادہ کرتے ہوئے ایک بار پھر طالبان کے خلاف حالیہ مہینوں میں پاکستانی فوج کی کارروائیوں کی تعریف کی ہے۔

امریکی وزیر دفاع کا کہنا ہے کہ اس بات کو نہیں بھولنا چاہیئے کہ پاکستانی طالبان القاعدہ اور افغان طالبان کے ساتھ مل کر کارروائیاں کر رہے ہیں لہذا انھیں ایک دوسرے سے الگ کرنا ناممکن ہے۔ ان کے بقول مختلف انتہا پسند گروہوں میں تفریق کرنے سے نتائج کا حصول ممکن نہیں۔

رابرٹ گیٹس نے اپنے مضمون میں لکھا ہے کہ سرحد کی دونوں جانب موجود اِ ن تمام گروہوں کے خلاف کارروائی کرنے سے ہی افغانستان اور پاکستان اس لعنت سے چھٹکارا حاصل کر سکتے ہیں اور ایسے عناصر کو ختم کر سکتے ہیں جو اس علاقے اور بیرونی دنیا میں دہشت گردی کو فروغ دے رہے ہیں۔

امریکی عہدے دار یہ الزام لگاتے آئے ہیں کہ پاکستان کے شمالی وزیرستان کے علاقوں میں افغان طالبان اور القاعدہ کے جنگجوؤں نے محفوظ پناہ گاہیں اور تربیت گاہیں بنا رکھی ہیں جنہیں افغانستان میں غیرملکی افواج پر حملوں کے لیے استعمال کیا جا رہا ہے۔

امریکہ پاکستان پر زور دیتا آیا ہے کہ وہ ان مفرور انتہا پسندوں کے خلاف فوجی آپریشن کرے لیکن مبینہ طور پرپاکستانی فوجی ایسا کرنے سے گریزاں ہے۔ امریکی مبصرین کا کہنا ہے کہ بظاہر اسی صورت حال کے پیش نظر حالیہ مہینوں میں شمالی وزیرستان میں بغیر پائلٹ کے امریکی جاسوس طیاروں کے میزائل حملوں میں غیر معمولی تیزی آئی ہے جن میں طالبان اور القاعدہ کے کئی اہم کمانڈر مارے جا چکے ہیں۔

وزیر دفاع گیٹس اپنے مضمون میں لکھتے ہیں کہ وہ پاکستان کے دورے کے دوران سیاسی اور فوجی قائدین سے ملاقاتوں میں اس بات پر زور دیں گے کہ امریکہ ماضی کی شکایتوں کو بھولنے کا خواہش مند ہے۔

واضح رہے کہ پاکستان آمد سے قبل رابرٹ گیٹس اپنے دورہ بھارت کے دوران متنبہ کیا تھا کہ جنوبی ایشیا میں انتہا پسند پاکستان اور بھارت کے درمیان کشیدگی کا فائدہ اُٹھا کر دونوں ملکوں کے درمیان ایک اور جنگ کروا سکتے ہیں۔

XS
SM
MD
LG