رسائی کے لنکس

مائیکل میکفال کا کہنا تھا کہ اُنھیں اس پابندی کا تب علم ہوا جب اُنھوں نے دسمبر میں روس جانے کے لیے ویزے کی درخواست دی۔

روس میں امریکہ کے سابق سفارت کار مائیکل میکفال نے کہا ہے کہ ماسکو نے اُن کے ملک میں داخلے پر پابندی عائد کر دی ہے۔

مائیکل میکفال 2012 سے 2014 تک روس میں امریکہ کے سفیر رہے۔ اُنھوں نے جمعہ کو سماجی رابطے کی ویب سائیٹ ’فیس بک‘ پر لکھا کہ صدر براک اوباما سے قریبی روابط کے سبب روس نے اُن کے ملک میں داخلے پر پابندی عائد کی۔

’’بتایا گیا کہ میں کریملن کی تعزیرات کی فہرست پر ہوں، کیوں کہ میرے اوباما سے قریبی روابط ہیں‘‘۔

اُنھوں نے کہا کہ کرائمیا کے 2014 میں روس سے الحاق کے بعد بعض سینیئر روسی عہدیداروں پر امریکہ کے ویزے کے حصول پر پابندی کے جواب میں یہ اقدام اٹھایا گیا۔

مائیکل میکفال کا کہنا تھا کہ اُنھیں اس پابندی کا تب علم ہوا جب اُنھوں نے دسمبر میں روس جانے کے لیے ویزے کی درخواست دی۔ اُن کا کہنا تھا کہ وہ صدارتی انتخابات میں ہلری کلنٹن کی کامیابی کی صورت میں وہاں کام کے سلسلے میں جانا چاہتے تھے۔

میکفال جو اس وقت سٹیفورڈ یونیورسٹی میں پروفیسر ہیں، نے ’فیس بک‘ کے اپنے صفحے پر لکھا کہ وہ اُمید کرتے ہیں کہ اُن پر روس کے سفر کے لیے یہ پابندی ہمیشہ نہیں رہے گی۔

XS
SM
MD
LG