رسائی کے لنکس

روس اپنے جوہری ہتھیاروں کے ذخیرے کا انکشاف کر سکتا ہے


پچھلے ہفتے امریکہ کی طرف سے اسلحے کے ذخیرے کی صورتِ حال کو ظاہر کرنے کے بعد، روس نےپہلی بار کہا ہے کہ وہ اپنے جوہری ہتھیاروں کے ذخیرے کی سائیز کے بارے میں انکشاف کرسکتا ہے۔

روسی وزارتِ خارجہ کے ترجمان ایندری نیسٹےرینکو نے بتایا ہے کہ ایسی معلومات روس اُس وقت ظاہرکرسکتا ہے جب امریکہ اور روس کے درمیان ہونے والے جوہری ہتھیاروں کی تخفیف کے معاہدے پر عمل درآمد شروع ہوگا۔

اُنھوں نے بدھ کے روز نامہ نگاروں کو بتایا کہ امریکی انکشاف جوہری اور غیر جوہری ہتھیار رکھنے والے ملکوں کے درمیان شفافیت اور اعتماد کے عنصر کو فروغ دینے کا باعث بنے گا۔

پچھلے ہفتے پینٹاگان نے اعلان کیا تھا کہ گذشتہ ستمبر میں اسلحے کے ذخیرے میں 5113جوہری ہتھیار لے جانے والے میزائیل شامل تھے۔ دفاعی عہدے داروں کا کہنا ہے کہ سرد جنگ کے زمانے میں اور 1967ء کےامریکی تفاصیل کے مطابق اِن ہتھیاروں کی تعداد 31000تھی، جِس سے پتا چلتا ہے کہ اِس تعداد میں کافی حد تک کمی لائی جا چکی ہے۔

پینٹاگان کے اعلان سے پیشتر اپریل میں پراگ میں امریکی صدر براک اوباما اور روسی صدر دمتری مدیدیو کی ملاقات ہو چکی ہے۔ دونوں راہنماؤں نے ایک معاہدے پر دستخط کیے ہیں جس میں ہر ملک کے جوہری اسلحے میں 30فی صد تک کمی لانے کا کہا گیا ہے۔

اِس سمجھوتے پر عمل درآمد کے لیے امریکی سینیٹ اور روسی پارلیمان کی طرف سے توثیق ضروری ہے۔

یہ سمجھوتا 1991ء کے تخفیفِ اسلحہ معاہدے کی جگہ لے گا جِس کی میعاد گذشتہ برس ختم ہوچکی ہے۔

XS
SM
MD
LG